The news is by your side.

Advertisement

پی آئی اے کے سی ای او کی تعیناتی خلاف ضابطہ قرار دے دی گئی

کراچی : پی آئی اے کے چیف ایگزیکٹو آفیسر کی تعیناتی خلاف ضابطہ قرار دے دی گئی، آڈیٹر نے ڈاکٹر مشرف رسول کو بلا تاخیر عہدے سے ہٹانے کی سفارش کر دی۔

گورنمنٹ آڈٹ کا سی ای او پی آئی اے کو ارسال کردہ پیرا اے آر وائی نیوز کو موصول ہوگیا، آڈیٹر کے مطابق عہدے پر تعیناتی کے لئے مشرف رسول کو خلاف ضابطہ ترجیح فراہم کی گئی۔

تعیناتی کے لئے دیئے گئے اشتہارمیں درج تجربے اور دیگر شرائط پر بھی مشرف رسول پورا نہں اترتے، مشرف رسول کی تعیناتی میں ایس ای سی پی گائیڈ لائن کی بھی مکمل خلاف ورزی کی گئی ہے۔

گورنمنٹ آڈٹ کے پیرا میں گائیڈ لائن کے تحت دوسال کے بجائے تین سالہ مدت پر مبنی تعیناتی بھی خلاف ضابطہ قرار دیا گیا ہے، حکومت کے منظورکردہ ایم ون گریڈ کی تنخواہ کے بجائے 20 لاکھ پر تعیناتی بھی خلاف قانون قرار دی گئی۔

مشرف رسول کے میٹرک سرٹیفکیٹ اور شناختی کارڈ میں درج تاریخ پیدائش کا فرق پی آئی اے کے پرسنل پالیسی مینول کے خلاف ہے۔

آڈیٹر کا مزید کہنا ہے کہ بورڈ آف ڈائریکٹرز نے ڈاکٹر مشرف رسول کی ملازمت کے لئے درخواست کو شارٹ لسٹ نہیں کیا، امیداوروں کے ابتدائی انٹرویوز میں مشرف رسول کو اگلے مرحلے کے لئے منتخب نہیں کیا گیا۔

انٹرویوز کے دوران مشیر ہو ابازی کی موجودگی بھی پی ایس سی رولز کی خلاف ورزی ہے، آڈیٹر کی جانب سے سفارش کی گئی ہے کہ تعیناتی کے دوران ادا تنخواہ، کار اوراستعمال شدہ ٹکٹوں کی فوری ریکوری کی جائے۔

تعیناتی کے لئے وزیراعظم کے مشیر برائے ہوا بازی کی جانب سے ڈالے گئے دباؤ کی تحقیقات کسی خود مختار اور آزاد ایجنسی سے کرائی جائیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں