site
stats
پاکستان

پی آئی اے کے ڈاکٹرز ادویات میڈیکل اسٹورز پر فروخت کرنے لگے

کراچی : پی آئی اے کے ڈاکٹرز پی آئی اے ملازمین کو ادویات تجویز کرکے میڈیکل اسٹورز سے پیسے بٹورنے لگے، اے آر وائی نیوز نے دستاویزی شواہد حاصل کر لئے ہیں۔

اے آر وائی نیوز کو موصول ہونے والے دستاویزی شواہد کے مطابق منظور نظر پی آئی اے ملازمین کو ادویات تجویز کر کے میڈیکل اسٹورز کو ہی فروخت کی جا رہی ہیں۔ ڈاکٹر ہر ماہ خود کو بھی ہزاروں روپے کی ادویات جاری کرتے ہیں، مبینہ طور پر اس لوٹ مار میں ڈاکٹر تہمینہ فاروقی، ڈاکٹر ایس ایم حسین گیلانی، ڈاکٹر علی اکبر، استقبالیہ کلرک ہارون دلاور اور ڈپٹی چیف میڈیکل افسر ڈاکٹر حسن ابرار کا نام لیا جا رہا ہے۔

ڈاکٹروں کی کرپشن کیخلاف پی آئی اے ملازمین بارہا احتجاج بھی کر چکے ہیں۔

دستاویزی شواہد کے مطابق ایک ڈاکٹر نے خود کو یومیہ 45 گولیاں جاری کرائیں۔ پی آئی اے ملازمین نے الزام عائد کیا کہ ڈاکٹر اپنے اور اہلخانہ کے نام پر ضرورت سے زائد ادویات جاری کراتے ہیں، تمام پرچیوں پر چیف میڈیکل آفیسر ڈاکٹر حسن ابرار کی منظوری کی مہر بھی موجود ہے۔

ذرائع کے مطابق لاہور میں پی آئی اے کی جانب سے مخصوص پانچ اسٹورز کی پندرہ سے بیس لاکھ روپے کی سیل کے مقابلے میں ایک اسٹور کی دو کروڑ روپے کی سیل نے معاملہ مشکوک کردیا، پی آئی اے انتظامیہ نے اس میڈیکل اسٹور پر ادویات کی مبینہ فروخت کی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top