The news is by your side.

Advertisement

پی آئی اے طیارہ حادثہ: متاثرین کا ذمہ داروں کیخلاف کارروائی کا مطالبہ

کراچی : پی آئی اے طیارہ حادثے کے متاثرین نے جاری کردہ تحقیقاتی رپورٹ مسترد کرتے ہوئے کہا سول ایوی ایشن کو سیاسی بنیادوں سے پاک ادارہ بناکر پاکستانیوں کی زندگیوں کو محفوظ بنایا جائے۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان انٹرنیشنل ائرلائن طیارہ حادثے میں جاں بحق ہونے والے افراد کے اہل خانہ نے حادثے کی تحقیقاتی رپورٹ مسترد کردی، متاثرین نے مطالبہ کیا ہے کہ ذمہ داروں کے خلاف کارروائی کی جائے اور جامعہ اور حقائق پر مبنی تحقیقات کی جائے گی۔

یہ مطالبہ پی آئی اے طیارہ حادثے کے متاثرین نے کراچی پریس کلب میں کیا اس موقع پر متاثرین کے ہمراہ امریکی شہری یاسین بھی موجود تھا، یسین کا کہنا تھا کہ حادثے کی تحقیقاتی رپورٹ کو مسترد کرتے ہیں حادثے کا جو بھی ذمہ دار ہے اسے سزا ملنی چاہئیے۔

حادثے میں اپنی زوجہ اور بچوں کو کھونے والے عارف فاروقی نے کہا کہ جس طرح ہمارے ساتھ ہوا اسی مشکل سے امریکی شہری یسین کو بھی دوچار ہونا پڑا جسے اپنے باپ کی میت تلاش کرنا پڑی۔

ان کا کہنا تھا کہ پی ائی اے کے پائلٹ کے لائسنسز کا ایشو لانا ایک احمقانہ حرکت ہے، کن کی ایما پر ان لوگوں کو بھرتی کیا گیا ان کے خلاف بھی کاروائی ہونی چاہئیے، انہوں نے مطالبہ کیا تھا کہ قومی ایئرلائن کا فضائی اپریشن بند کرکے مکمل تحقیقات کی جائے۔

طیارہ حادثے میں ہلاک ہونے والی ایک اور خاتون کے اہل خانہ نے کہا کہ پاکستانی فضائی حدود انتہائی خطرناک ہے یہاں اوسط ہر دوسال بعد حادثہ ہوتا ہے، ان حادثوں کا ذمہ دار کون ہے۔

متاثرین کا کہنا تھا کہ پاکستانیوں کے تحفظ کے لئے سول ایوی ایشن میں میرٹ کی از سر نو بنیاد اور سیاسی سفارشات پر مکمل قدغن لگائی جائے۔

ہلاک ہونے والے مسافر کی بہن کنول ارسلان کا کہنا تھا کہ طیارہ حادثے کا کوئی ایک ذمہ دار نہیں ہم منتظر ہیں کہ عدالت ہمیں انصاف فراہم کریگی۔

یاد رہے کہ 22 مئی جمعۃ الوداع کو لاہور سے کراچی آنے والا پی آئی اے کا طیارہ ایئرپورٹ کے قریب واقع ماڈل کالونی جناح گارڈن کی رہائشی آبادی پر گر کر تباہ ہوگیا تھا جس کے نتیجے میں 97 مسافر ہلاک جبکہ 2 مسافر معجزانہ طور پر بچ گئے تھے۔ حادثے میں مقامی لوگوں کی ہلاکتیں بھی ہوئیں جبکہ پانچ گھر مکمل تباہ ہوگئے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں