site
stats
پاکستان

قومی ایئر لائن کی نجکاری، اپوزیشن کا قومی اسمبلی کے اجلاس سے واک آؤٹ

اسلام آباد: حکومت کیجانب سے قومی ایئرلائن کی نجکاری کے فیصلے کیخلاف اپوزیشن کا احتجاج جاری ہے، اپوزیشن نے قائدحزب اختلاف سید خورشیدشاہ کی قیادت میں قومی اسمبلی اجلاس سے واک آؤٹ کیا، خورشیدشاہ کا کہنا ہے کہ ہم بچے نہیں، لولی پاپ نہ دیا جائے.

حکومت کیجانب سےقومی ایئرلائن کی نجکاری کے فیصلے نے سیاسی حریفوں کو یکجا کردیا ہے، قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف کی زیر صدارت اپوزیشن جماعتوں کا دوسرا اجلاس ہوا۔

اجلاس میں پی آئی اے کی نجکاری اور چالیس ارب روپے کے نئے ٹیکسز کیخلاف مستقبل کے لائحہ عمل پر مشاورت کی گئی، اجلاس میں قومی مفاد کے فیصلے پر سارے سیاسی حریف ایک نکتے پر متفق و متحد نظر آئے، سب کا متفقہ فیصلہ تھا کہ نہ پی آئی اے کی نجکاری ہونے دینگے نہ نئے ٹیکس کا اطلاق ہونے دینگے، ہرسطح پر احتجاج کیا جائیگا۔

قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ پی آئی اے کی نجکاری ہورہی ہے یا پھر کسی کو نوازا جارہا ہے، حکومت معاملے کو قومی اسمبلی میں لائے اور نجکاری کی وجہ بتائے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ قومی ایئرلائن کی نجکاری گھاٹے کا سودا ہے، اپوزیشن نے پی آئی اے کی نجکاری کے حکومتی فیصلے کیخلاف قومی اسمبلی کے اجلاس سے واک آؤٹ کرتے ہوئے فیصلے کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔

اجلاس میں شاہ محمود قریشی، شیخ رشید، صاحبزادہ طارق اللہ، فاروق ستار سمیت دیگر رہنما بھی شریک تھے.

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top