The news is by your side.

Advertisement

جرمنی، آسٹریلیا، کوریا سے پاکستانیوں کی واپسی کے لیے خصوصی پروازیں

امریکا میں پھنسے پاکستانیوں کو واپس لے جانے کی اجازت مل گئی، 300 کینیڈین شہری پی آئی اے فلائٹ سے اپنے وطن روانہ

کراچی: قومی ایئر لائن نے جرمنی، آسٹریلیا اور کوریا میں کرونا وائرس کی وبا کی وجہ سے پھنسے پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے لیے خصوصی پروازیں آپریٹ کرنے کا شیڈول ترتیب دے دیا ہے۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق پی آئی اے بیرون ملک پھنسے پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے لیے بڑا فیصلہ کرتے ہوئے پہلی مرتبہ آسٹریلیا اور کوریا کے شہر سیئول کے لیے خصوصی پروازیں آپریٹ کرے گی، جرمنی کے لیے بھی خصوصی پرواز آپریٹ کی جائے گی۔

پی آئی اے کی خصوصی پروازیں 23، 24 اور 25 اپریل کے درمیان اسلام آباد سے روانہ ہوں گی، قومی ایئر لائن کی خصوصی پرواز پی کے 8962 اسلام آباد سے میلبرن کے لیے روانہ ہوگی، جو آسٹریلیا میں محصور 200 سے زائد ہم وطنوں کو لے کر پاکستان آئے گی۔

پی آئی اے نے برطانیہ کا آپریشن جزوی طور پر بحال کر دیا

جرمنی کے شہر فرینکفرٹ کے لیے خصوصی پرواز پی کے 8749 بھجوائی جائے گی جو جرمنی محصور 2500 سے زائد ہم وطنوں کو فرینکفرٹ سے واپس لے کر اسلام آباد آئے گی۔ پی آئی اے کی خصوصی پرواز ساؤتھ کوریا کے شہر سیئول سے 200 سے زائد ہم وطنوں کو لے کر اسلام آباد پہنچے گی،

ذرایع کا کہنا ہے کہ سی اے اے کی جانب سے اجازت ملنے کے بعد پرواز کا شیڈول جاری کیا جائے گا، دریں اثنا، ایئر لائن نے آسٹریلیا، سیئول اور جرمنی کے لیے پلاننگ شروع کر دی ہے، ان پروازوں کے لیے پی آئی اے بوئنگ 777 طیارے آپریٹ کرے گی۔

ادھر امریکا میں پھنسے 750 پاکستانیوں کو وطن واپس لے جانے کی اجازت مل گئی ہے، ذرایع کے مطابق امریکی حکام نے ان پاکستانیوں کو واپس لے جانے کے لیے خصوصی پروازوں کی اجازت دے دی ہے، جس کے بعد واشنگٹن میں پاکستانی سفارت خانہ متعدد ایئر لائنز کے ذریعے پاکستانیوں کو واپس بھیجنے کے امکانات پر غور کر رہا ہے، قطر ایئر ویز کے ساتھ بھی خصوصی پرواز کے لیے بات چیت جاری ہے۔

دوسری طرف پی آئی اے کا کینیڈا کے لیے خصوصی پروازوں کا آپریشن بھی جاری ہے، خصوصی پرواز 300 سے زائد کینیڈین شہری اور مسافروں کو لے کر ٹورنٹو روانہ ہو چکی ہے، پرواز کی روانگی سے قبل تمام مسافروں کو مکمل سینیٹائز کیا گیا، پی آئی اے کی جانب سے مسافروں کو ماسک بھی فراہم کیے گئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں