The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں 60 ہزار مقامی درخت لگانے کا فیصلہ

کراچی: شہرِ قائد کو ایک بار پھر سرسبز وشاداب بنانے کے لیے سٹی گورنمنٹ نے ساٹھ ہزارنئے درخت لگانے کا فیصلہ کیا ہے‘ یہ تمام درخت کراچی کے ماحول کی مناسبت سے ہوں گے۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق کراچی کی شہری حکومت نے شہر میں درخت اگانے کی مہم شروع کرنے کا فیصلہ وزیراعظم کے پروگرام برائے سرسبز پاکستان کے تحت کیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ شہرِقائد کے چھ اضلاع میں مجموعی طور پر ساٹھ ہزار پودے نصب کیے جائیں گے۔ ہر ضلع میں دس ہزار پودے اگائے جائیں گے۔

شہری حکومت کے ذرائع کا کہنا ہے کہ اس مہم کے تحت لگائے جانے والے تمام پودے ماحول دوست ہوں گے اور کراچی کے ماحول سے پوری طرح مطابقت رکھتے ہوں گے۔ ان کو اگانے سے کراچی کے موسم پر کسی قسم کے منفی اثرات مرتب نہیں ہوں گے۔

سرسبز پاکستان مہم


رواں سال فروری میں ملک بھر میں ماحول کو سرسبز و شاداب بنانے اور آلودگی کے خاتمے کے لیے قومی سرسبز دن مناتے ہوئے وزیر اعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف نے پودا لگا کر ’سرسبز پاکستان‘ مہم کا آغاز کیاتھا۔

ملک بھر میں بڑے پیمانے پر شجر کاری کے لیے سر سبز پاکستان مہم کا آغاز وزیر اعظم کی خصوصی ہدایت و نگرانی میں کیا گیا تھا۔ اس منصوبے کے تحت ملک بھر میں 10 کروڑ مقامی پودے لگائے جائیں گے۔

غیرملکی کونو کارپس درخت


یاد رہے کہ سابق سٹی ناظم مصطفیٰ کمال کے دورِ حکومت میں کراچی کو سرسبز بنانے کے لیے معلومات کی کمی کی بنا پر غیر ملکی نسل کے کونو کارپس درخت کثیر تعداد میں نصب کیے تھے جو کہ بہت تیزی سے سے افزائش کرتے ہیں تاہم کراچی کے ماحول سے ہرگز مطابقت نہیں رکھتے۔

گزشتہ سال اگست میں کمشنر کراچی اعجاز احمد خان نے ’کونو کارپس‘ درخت کی خرید و فروخت پر پابندی عائد کرتے ہوئے ضلعی انتظامیہ کو اس پر عملدر آمد یقینی بنانے کی سختی سے ہدایت کی تھی۔

واضح رہے کہ کونو کارپس کے درخت درختوں کی مقامی قسم نہیں ہے جس کے باعث یہ کراچی کے لیے مناسب نہیں۔ کونو کارپس کراچی میں پولن الرجی کا باعث بن رہے ہیں۔ یہ دوسرے درختوں کی افزائش پر بھی منفی اثر ڈالتے ہیں جبکہ پرندے بھی ان درختوں کو اپنی رہائش اور افزائش نسل کے لیے استعمال نہیں کرتے۔

معلومات کی عدم فراہمی کے باعث کراچی میں بڑے پیمانے پر یہ درخت لگائے جا چکے ہیں۔ صرف شاہراہ فیصل پر 300 کونو کارپس درخت موجود ہیں۔بعض ماہرین کے مطابق کونو کارپس بادلوں اور بارش کے سسٹم پر بھی اثر انداز ہو رہے ہیں جس کے باعث کراچی میں مون سون کے موسم پر منفی اثر پڑ رہا ہے۔

یاد رہے کہ کراچی کے مقامی درختوں میں نیم، ببول، گل مہر، سائرس، لنگرا اور دیگر ماحول دوست درخت شامل ہیں جوکہ کراچی کے ماحول پر مثبت اثرات مرتب کرتے ہیں۔ گزشتہ چار دہائیوں میں تعمیراتی مقاصد اور دیگر وجوہات کے سبب ان درختوں کو بے دریغ کاٹا گیا جس کے سبب کراچی کے درجہ حرارت میں غیر معمولی اضافہ دیکھنے میں آیا ہے جبکہ کراچی میں ہونے والی بارشوں میں بھی ماضی کی نسبت کمی واقع ہوئی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں