The news is by your side.

Advertisement

آرمی چیف اور وزیراعظم کراچی کے مسائل حل کرنے کے لیے کردار ادا کریں، مصطفیٰ کمال

کراچی: پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین مصطفیٰ کمال نے کہا ہے کہ کراچی کی حالت اور سسٹم اس لیے تباہ ہوا کیونکہ شہر کو کوئی اون نہیں کرتا، صفائی نہ ہونے پر بس ایک دوسرے پر الزامات عائد کیے جارہے ہیں، آرمی چیف اور وزیراعظم کراچی کے لیے کردار ادا کریں۔

اے آر وائی نیوز کی خصوصی ٹرانسمیشن میں  گفتگو کرتے ہوئے مصطفیٰ کمال کا کہنا تھا کہ  کراچی کوکوئی اون نہیں کررہااس لئےحالات ایسےہیں،شہر میں صفائی ستھرائی کے ناقص انتظامات پر اقدامات نہیں کیے جاتے بس سب ایک دوسرے پر الزامات عائد کرتے ہیں۔

اُن کا کہنا تھا ہم سالڈویسٹ مینجمنٹ کو یونین کونسل کی سطح پر لے جانا چاہ رہے تھے، وزیربلدیات سعید غنی کا مؤقف درست ہے کہ نالوں کی صفائی کی ذمہ داری سندھ حکومت پر نہیں بلکہ ڈی ایم سی پر عائد ہوتی ہے، اختیارات سےمتعلق2007میں  ہماری درخواست پرسپریم کورٹ کافیصلہ موجودہے۔

مزید پڑھیں: کلین کراچی مہم کا افتتاح، سوچ بدلے بغیرکراچی کے مسائل حل نہیں ہوں گے

مصطفیٰ کمال کا کہنا تھا کہ کراچی شہر کو صرف 2ہفتوں  میں صاف نہیں کیاجاسکتا، تیرہ ہزار ٹن کچرے میں ایک ہزار ٹن گاربیک نہیں ہوتا پھر بھی  ڈی ایم سیز کے تمام ٹاؤنز ملیر میں جاکر کچرا گرادیتے ہیں۔

پی ایس پی چیئرمین کا کہنا تھا کہ وفاقی وزیرعلی زیدی وزیراعظم کا ہاتھ پکڑکر کراچی لے کر آئیں، شہر کو پرائیویٹ این جی اوز کے طور پر نہیں لینا چاہیے بلکہ اس کو سب کو اون کرنا چاہیے۔ علی زیدی میرے لئے بہت قابل احترام ہیں مگر آرمی چیف اور وزیراعظم سے اپیل ہے کہ وہ کراچی کے لیے کردار ادا کریں۔

اُن کا کہنا تھا کہ کراچی کےمسائل کے حل کیلئے سندھ حکومت کو اعتماد میں لینا ضروری ہے، شہر کے مسائل پر آپ کسی ایک کو ذمہ دار نہیں ٹھہراسکتے، وزیربلدیات کہتے ہیں نالوں کی صفائی کے لیے 50کروڑ روپے کے فنڈز جاری کیے مگر صورتحال جوں کی توں برقرار ہےجبکہ ہمارے دور میں صفائی کے لیے فنڈز نہیں دیے گئے پھر بھی میں نے راتوں کو بستر چھوڑا اور سڑکوں پر جاکر کاموں کا جائزہ لیا، میئر کے پاس اختیارات ہوں گے تو معاملات درست انداز سے چلیں گے۔

 

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں