The news is by your side.

Advertisement

کسان کارڈ ایک زبردست عمل ہے جو پاکستان کو تبدیل کرے گا اورکرپشن نیچے آئے گی، وزیراعظم

ملتان: وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ کسان کارڈ ایک زبردست عمل ہے جو پاکستان کو تبدیل کرے گا اور ،کرپشن نیچے آئےگی، کسان کو جتنا مضبوط کرینگے اتنا ہم اپنے ملک کو مضبوط کریں گے ۔

تفصیلات کے مطابق ملتان میں کسان کارڈ تقسیم کرنے کی تقریب کا انعقاد کیا گیا ، تقریب میں عثمان بزدار، شاہ محمود قریشی ، خسرو بختیار بھی شریک ہوئے، تقریب میں وزیراعظم عمران خان نے کسانوں میں کسان کارڈ تقسیم کئے۔

تقریب سے وزیراعظم عمران خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عثمان بزدار،پنجاب حکومت کو خراج تحسین پیش کرتاہوں، وقت ثابت کرے گا کہ آپ مارڈرن ایگریکلچر کی طرف جارہےہیں، کسان کارڈ ایک زبردست عمل ہے جو پاکستان کو تبدیل کرے گا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ کسان پاکستان کی ریڑھ کی ہڈی ہیں ، کسان کو جتنا مضبوط کرینگے اتنا ہم اپنے ملک کو مضبوط کریں گے ، کسان کارڈ زبردست عمل ہے ،کرپشن نیچے آئےگی۔

وزیراعظم نے کہا کہ ٹیکنالوجی سے پیپر ورک ختم ہوجاتاہے ، صرف ہمارےدور میں کسانوں کو اضافی پیسہ ملا ، گندم کے کسانوں کو 500ارب روپے اضافی ملا ، ہمارےدور میں گندم کی قیمت 500روپے بڑھی ہے جبکہ گنے ،مونگ، مکئی اور دودھ کی قیمت سے 1100 ارب روپے اضافی کسانوں کے پاس گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ سب سے زیادہ غربت دیہاتوں میں ہے ، کسان کارڈسےڈی اے پی پر ایک ہزارروپے سبسڈی دینےجارہےہیں ، کسان کارڈ کےذریعے قرضے بھی دے سکیں گے اس کی بھی تیاری جاری ہے۔

عمران خان نے مزید کہا کہ فصل خراب ہونے پر کسانوں کی پیسوں کےذریعےمدد کرینگے ، کسان کارڈ کسانوں کی زندگیاں تبدیل کردے گا۔

ڈیمز کے حوالے سے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ اضافی پانی کیلئے50سال کے بعد دو بڑے ڈیمز بن رہےہیں، ان ڈیموں کےذریعے کسانوں کو اضافی پانی میسر آئےگا، 2بڑےڈیمز کے علاوہ چھوٹے ڈیمز اور نہرے بنا رہے ہیں، نہریں پکی کرنے کیلئے 220ارب روپے مختص کئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ چین سے بات کرکے ایگریکلچر کو سی پیک میں شامل کیا ہے، ہمارے کسان وہی طریقے استعمال کررہےہیں جو موہن جو داڑو دور کے ہیں، کسانوں کیلئے نئے تجربوں کی ضرورت ہے جس کیلئے پرائیوٹ سیکٹر کو شامل کریں گے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ ایکسٹینشن سروسز کےذریعے کسانوں کو پیداوارمیں اضافے کام کرنے کے ساتھ ساتھ 40ارب روپے سے لائیو اسٹاک کی نسلوں کو ٹھیک کریں گے۔

وزیراعظم نے کہا کہ دودھ پیداوار3 گنا بڑھنے سے ہم چیز اور دودھ ایکسپورٹ کرسکیں گے، لائیواسٹاک ٹھیک کرلیں تو3سالوں میں 25 ارب روپے کما سکتے ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ سبزیوں،پھلوں کےنقصانات 50فیصد ،گندم پر نقصان 20فیصدہوتاہے ، سبزیوں،پھلوں ، گندم ضائع ہونےسے بچانے کیلئے اسٹوریج ڈیولپ کرینگے ، فوڈ پراسیسنگ پلانٹ لگائیں جو نقصانات سے بچائیں گے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہم بہت مشکل سے اپنے کرنٹ اکاؤنٹ کو سرپلس میں لے کر آئےہیں، دالیں، اسپغول وغیرہ ایسی چیز ہیں جو امپورٹ کی ضرورت نہیں، میانوالی ،کالاباغ میں تقریباً6ارب ٹن پوٹیشئم ہے ، ہم سب سے پہلے چاہتے ہیں کہ کسانوں کی آمدنی دگنی ہوجائے، کسان خوشحال ہوگا تو وہ اپنی زمینوں کو بہتر کرے گا ،پیداواربہتر کرےگا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ پیداواربڑھانے کےلئے قدم اٹھارہےہیں تاکہ چیزیں امپورٹ نہ کرناپڑیں، سبزیوں اور پھلوں کی پیداوار 5فیصد بڑھانے پر کام کررہےہیں ، ہم 8ملین ٹن مکئی کا ہدف 25ملین ٹن تک لیکر جاناچاہتے ہیں۔

ا نھوں نے مزید کہا کہ اگلے دو ماہ میں ان سب چیزوں کی تفصیلات خود پیش کروں گا، زرعی شعبے کے منصوبوں کی خود نگرانی کروں گا اور ایک ایک زرعی منصوبے کی تفصیل ٹائم فریم کیساتھ دوں گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں