The news is by your side.

Advertisement

ہم چاہتے ہیں مقبوضہ کشمیر پر اوآئی سی قائدانہ کردار ادا کرے، وزیراعظم عمران خان

اسلام آباد : وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ مقبوضہ کشمیر پر بھارتی فوج کےقبضے کے پوری دنیا پر اثرات آئیں گے، ہم چاہتے ہیں مقبوضہ کشمیر پر اوآئی سی قائدانہ کردار ادا کرے۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے الجزیرہ ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت نے ملک کو درست سمت پرگامزن کردیا ہے، حکومت سنبھالی تو معاشی محاذ پر متعدد چیلنجزدرپیش تھے، معاشی اصلاحات کاروبار میں آسانی سمیت متعدد اقدامات کئے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ نہیں چاہتےکہ ہماری معیشت کا انحصارقرضوں پر ہو، کورونا وبا کےدوران پاکستان نے مشکل فیصلے کئے، ہمیں کورونا کیساتھ اپنی عوام کو بھوک سے بھی بچانا تھا، آگے بڑھنے کیلئے کرپشن کاخاتمہ بہت ضروری ہے، ملک سے کرپشن کے خاتمےکیلئے پر عزم ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ میرےدورحکومت میں جو تنقید ہوئی وہ کسی دورمیں نہیں ہوئی، 20 سال برطانیہ میں رہا،جانتا ہوں آزادی  اظہار کا کیا مطلب ہے ، میرے دور میں آزادی اظہارپرقدغن کی کوئی ایک مثال موجود نہیں ، ہماری حکومت نے خندہ پیشانی سے تنقید کا سامنا کیاہے ، ہم نے الیکشن جیتا ،کوئی ایک حلقہ بتائیں جس پر اعتراض ہو۔

ان کا کہنا تھا کہ مسلح افواج کیساتھ بہترین تعلقات ہیں ، ہر فیصلے پر ساتھ ہوتے ہیں ، افغانستان سمیت ہر معاملے پر فوج ہمارے  ساتھ ہے، حکومت اور فوج میں مکمل ہم آہنگی ہے، جمہوری طریقے سے عوام کے ووٹ کی طاقت سےحکومت میں آئے۔

افغانستان کے حوالے سے وزیراعظم نے کہا کہ میں نے ہمیشہ افغان مسئلے کے سیاسی حل کی تجویز دی ، جو افغان عوام کیلئے بہتر ہوگا وہی ہمارے لئے بھی بہتر ہوگا، افغان امن معاہدہ ایک معجزہ ہے ، بعض عناصرافغان امن کوسبوتاژکرناچاہتے ہیں ، پاکستان افغانستان میں امن واستحکام کا حامی ہے۔

عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ مشترکہ سرحد نہ ہونےکےباوجودبھارت افغانستان معاملات میں مداخلت کرتاہے، 7 گنا بڑا ملک پڑوسی ممالک کےمعاملات میں مداخلت کرے تو مسائل ہوتے ہیں، فوجی حل کا کبھی حامی نہیں رہا۔

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت سے متعلق انھوں نے کہا کہ بھارت میں نازی نظریےکےحامی انتہاپسند حکمران اصل مسئلہ ہیں ، بھارتی حکمران جماعت کےزیرتابع دہشتگردتنظیم اب پورے بھارت پر قابض ہے، خصوصی حیثیت ختم کرکے بھارت نے اب کشمیر پرقبضہ کررکھاہے، مقبوضہ کشمیر پر بھارتی فوج کےقبضے کے پوری دنیا پر اثرات آئیں گے، ہم چاہتے ہیں مقبوضہ کشمیر پر اوآئی سی قائدانہ کردار ادا کرے۔

وزیراعظم کا مسئلہ فلسطین کے حوالے سے کہنا تھا کہ فلسطین کے معاملے پریکطرفہ فیصلے مسائل کا حل نہیں ، اسرائیل کوسوچناہوگاجب تک فلسطین کوالگ ریاست نہیں دےگامسئلہ حل نہیں ہوسکتا، فلسطین پر کسی بھی یکطرفہ فیصلے کےنتائج دورس ثابت نہیں ہوں گے۔

پاک چین تعلقات سے متعلق عمران خان نے کہا کہ پاکستان کامعاشی مستقبل چین سے وابستہ ہے ، ہمیشہ کی طرح چین کیساتھ پہلے سے بہتر تعلقات ہیں ، پاکستان کیلئے جو بھی فیصلہ کریں گے وہ قومی مفاد میں کریں گے، امریکا سمیت تمام دوست ممالک کیساتھ اچھےتعلقات ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ پہلی بار پاکستان کو اشرافیہ سے آزاد ہونے کا موقع ملا ہے، پہلی بار فیصلےغریب اور متوسط طبقے کو دیکھ کر کئے جارہے ہیں جبکہ پاکستان میں پہلی بار عوام کو ہیلتھ انشورنس کی سہولت ملی ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ سعودی عرب پاکستان کا بہت اچھا دوست ہے، بعض ممالک نے اسرائیل کو تسلیم کیا تو بھی فلسطین کامسئلہ حل نہیں ہوگا، پہلی بار پاکستان کو اشرافیہ کے چنگل سے آزاد کررہے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں