site
stats
پاکستان

افغان سرزمین پاکستان میں دہشت گردی کے لیے استعمال ہوئی، قومی سلامتی کمیٹی

اسلام آباد : وزیراعظم نوازشریف نے کابل میں ہونے والے حالیہ دھماکوں کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ افغان حکومت اور عوام کے ساتھ  ہمدردی ہے اور دہشت گردی کے خلاف ہر قسم کا تعاون فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم نوازشریف کی زیر صدارت ہونے والے قومی سلامتی کے اجلاس میں کابل میں دہشت گردی کے حالیہ واقعات کی شدید مذمت کرتے ہوئے افغانستان میں سلامتی کی بگڑتی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔

قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس کے شرکاء نے پاکستان پر بے بنیاد الزامات کو سختی سے مسترد کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان پرامن اور مستحکم افغانستان کے لئے پرعزم ہے۔

یہ پڑھیں : کابل : جنازے میں تین خود کش حملے، سات افراد ہلاک، 118زخمی

قومی سلامتی کمیٹی کے شرکاء کا کہنا تھا کہ افغانستان میں امن کیلئے پاکستان کا کردار نمایاں ہے تاہم افسوس ناک امر ہے کہ افغان سرزمین پاکستان میں دہشت گردی کے لیے استعمال ہوئی جس کے باعث پاکستان کو بھاری نقصان ہوا۔

یہ بھی پڑھیں : کابل: ڈپلومیٹک انکلیو میں دھماکا،90 افراد ہلاک ، 300زخمی

قومی سلامتی کمیٹی کے شرکاء نے کہا کہ پاکستا ن علاقائی امن واستحکام کے لئے پُرعزم ہے اور پاکستان نے بھاری جانی نقصان کے باوجود صبرکا مظاہرہ کیا لیکن اب افغان حکومت کو اس جانب توجہ دینے کی ضرورت ہے۔

اجلاس میں وفاقی وزیر دفاع خواجہ آصف، وزیر خزانہ اسحاق ڈار، وزیر داخلہ چوہدری نثار، مشیر خارجہ سرتاج عزیز، آرمی چیف قمر باجوہ، چیئرمین جوائنٹس چیف آف اسٹاف کمیٹی زبیر حیات، ایئر چیف سہیل امان، نیول چیف ایڈمرل زکاء اللہ اور ڈی جی آئی ایس آئی نوید مختار نے شرکت کی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top