The news is by your side.

Advertisement

نواز شریف نے سپریم کورٹ کے حکم پر وزارتِ عظمیٰ چھوڑ دی

اسلام آباد : ترجمان مسلم لیگ ن کا کہنا ہے کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد وزیراعظم نوازشریف نے اپنا عہدہ چھوڑدیا ہے، تحفظات کے باوجود فیصلے پرعمل درآمد کریں گے۔

تفصیلات کے مطابق پاناما کیس کا تاریخ ساز فیصلے کے بعد ترجمان مسلم لیگ ن کی جانب سے بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم نے عہدہ چھوڑدیا ہے اور وفاقی کابینہ تحلیل کردی گئی ہے۔  ترجمان کا کہنا تھا کہ ہمارے ساتھ ناانصافی ہوئی ہے لیکن عدالت کے فیصلے کا احترام کریں گے۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ  تحفظات کے باوجود فیصلے پرعملدرآمد کیا جائے گا، تحفظات سے متعلق تمام آئینی وقانونی آپشنز استعمال کیے جائیں گے، منصفانہ ٹرائل کے آئینی اور قانونی تقاضے بری طرح پامال کیےگئے۔

مسلم لیگ ن کے ترجمان کا مزید کہنا ہے کہ اس فیصلے پر تاریخ کا فیصلہ ہی اصل فیصلہ ہوگا، نوازشریف اللہ اورعوام کی عدالت میں سرخروہوں گے، وزیراعظم شام تک وزیراعظم ہاؤس سے پنجاب ہاؤس منتقل ہوجائیں گے۔ فیصلے کے فوری بعد ہونے والے مشاورتی اجلاس کے بعد جب وزراء واپس روانہ ہوئے تو ان کی گاڑیوں پر پاکستان کے جھنڈے نہیں تھے۔


مزید پڑھیں :  پاناما کیس: وزیراعظم نوازشریف نا اہل قرار


یاد رہے کہ سپریم کورٹ آف پاکستان کے پانچ رکنی بنچ نے پاناما لیکس کے تاریخ ساز مقدمے کا فیصلہ سناتے ہوئے وزیراعظم نواز شریف کو نا اہل قرار دے دیا اور کہا کہ نوازشریف صادق اورامین نہیں رہے جبکہ کیپٹن صفدر، اوراسحاق ڈارکو بھی نااہل قراردیا گیا ہے۔

عدالت نے نیب کو حکم دیا ہے کہ چھ ہفتوں کے اندروزیراعظم‘ کیپٹن صفدر‘ اسحاق ڈار اور مریم صفدرکے خلاف ریفرنس دائر کیا جائےاور احتساب عدالت چھ ماہ میں فیصلہ کرے۔

عدالت نے الیکشن کمیشن کو نا اہلی کا نوٹیفیکیشن جاری کرنے کا حکم دیا اور صدرِ پاکستان ممنون حسین کو کہا ہے کہ وہ آئین کے تحت جمہوری عمل کو آگے بڑھائیں۔


اگرآپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اوراگرآپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پرشیئرکریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں