The news is by your side.

Advertisement

بلوچستان کو حقوق دینے کے دن آگئے، وزیراعظم، سبی کوہلو شاہراہ کا افتتاح

سبی: وزیراعظم پاکستان نواز شریف نے کہا ہے کہ بلوچستان کو جس طرح حقوق سے محروم رکھا گیا یہ ایک الگ داستان ہے لیکن اب اس کے حقوق دینے کے دن آگئے ہیں،سبی تا کوہلو شاہراہ لوگوں سے ان کا فاصلہ 600 کلومیٹر سے سمٹ کر 174 کلومیٹر پر آگیا۔

Prime Minister salutes army FC for bringing peace by arynews

سبی سے کوہلو تک 174 کلومیٹر طویل شاہراہ کے افتتاح کے بعد خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ہم نے دہشت گردی کی کمر توڑ دی، اندرونی و بیرونی دشمن بے نقاب ہوچکے ہیں، فوج، ایف سی اور پولیس کی محنت سے دشمنوں کو منہ کی کھانی پڑی جس میں سیاسی جماعتوں نے بھی ساتھ دیا، امن و امان کے بغیر سرمایہ کاروں کو راغب نہیں کیا جاسکتا۔

انہوں نے کہا کہ بلوچستان کے حقوق واپس دینے کا دن آگیا ہے، ان کی برسوں کی محرومیوں کا ازالہ ہورہا ہے آج سبی تاکوہلو سڑک مکمل ہوگئی ہے، یہاں کوئی راستہ نہیں تھا سبی سے کوہلو آنے جانے کے لیے لوگوں کو 600 کلومیٹر کا طویل فاصلہ طے کرنا پڑتا تھا اب یہاں کے لوگ یہ فاصلہ 174 کلومیٹر میں طے کرکے اپنی منزل پر پہنچ جائیں گے۔
انہوں نے کہاکہ اس سڑک سے بلوچستان کے دور دراز علاقے ہائی وے سے منسلک ہوجائیں گے، کسانوں، اور تاجروں کو اپنا مال بڑی منڈی تک پہنچانے میں مدد ملے گی ساتھ ہی کوئٹہ اور پنجاب کے مابین فاصلے میں 180 کلومیٹر کی کمی آئے گی جس سے دلوں کے فاصلے بھی کم ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ بلوچستان کی خوشحالی ہماری منزل ہے، سبی اور کوہلو کے درمیان ترقی کا نیا دروازہ کھل رہا ہے،ہم آئے تو بلوچستان کو دہشت گردی اور غربت کا سامنا تھا، اسے محروم رکھا گئے یہ ایک الگ داستان ہے لیکن اب اس کے حقوق کی ادائیگی کے دن آگئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ترقی اور خوشحالی کے امکانات صرف بڑے شہروں تک نہیں چھوٹے شہروں تک بھی ہونے چاہئیں،گوادر کے چین سے جڑنے پر ساری دنیا کا سرمایہ اس طرف آئے گا کیوں کہ گوادر پاکستان اور پاکستان گوادر ہے۔

مزید ازاں انہوں نے کوہلو سے رکھنی تک 80 کلومیٹر طویل ایک اور شاہراہ سمیت دو سڑکیں بنانے کا اعلان کیا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں