The news is by your side.

Advertisement

مسلم لیگ ن کا عمران خان کے ساتھ حلف نہ اٹھانے کا فیصلہ

لاہور:مسلم لیگ ن نے عمران خان کے ساتھ حلف نہ اٹھانے کا فیصلہ کیا ہے ،ارکان عمران خان کے حلف اٹھانے کے بعد حلف لیں گے۔

تفصیلات کے مطابق صدرمسلم لیگ ن شہبازشریف نے سی ای سی کے اجلاس میں دی گئی تجویز پر اتفاق کرلیا اور عمران خان کے ساتھ حلف نہ اٹھانے کا فیصلہ کیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ن لیگ کے ارکان عمران خان کے حلف اٹھانے کے بعد حلف لیں گے۔

گذشتہ روز لاہور میں شہباز شریف کی زیرصدارت ن لیگ کی مجلس عاملہ کا اجلاس ہوا تھا، جس میں الیکشن میں شکست کے بعد پارٹی کے لائحہ عمل پر غور کیا گیا ، اجلاس میں خواجہ آصف، احسن اقبال، راجہ ظفر الحق، امیر مقام اور دیگر رہنما شریک ہوئے جبکہ بڑے تعداد میں نومنتخب ارکان اسمبلی بھی بیٹھک میں موجود تھے۔

لیگی ارکان نے حلف لینے یا نہ لینے کا فیصلہ شہباز شریف پر چھوڑ دیا تھا۔


مزید پڑھیں :  پی پی کے بعد ن لیگ نے بھی قومی و صوبائی اسمبلیوں میں بیٹھنے کا فیصلہ کر لیا


شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ن لیگ نے قومی و صوبائی اسمبلیوں کا حلف لینے کا فیصلہ کیا ہے، ہمارا کوئی رکن فارورڈ بلاک کی جانب نہیں جائے گاْ۔

ن لیگ نے فیصلہ کیا کہ حلف اٹھاتے وقت سیاہ پٹیاں باندھ کراحتجاج کیا جائے گا۔

قبل ازیں پاکستان پیپلز پارٹی نے بھی اسمبلیوں میں بیٹھنے کا فیصلہ کر لیا ہے، پی پی نے الیکشن میں شکست کا معاملہ پارلیمنٹ کے فلور پر اٹھانے پر زور دیا۔

یاد رہے کہ مسلم لیگ ن نے مولانا فضل الرحمٰن کی حلف بائیکاٹ کی تجویز کو مسترد کر دیا، ن لیگ کےرہنماؤں کا کہنا تھا تجویز ناقابل عمل اور جمہوریت کیلئے نقصان دہ ہے۔

واضح رہے انتخابات میں مبینہ دھاندلی سے متعلق وفاقی دارالحکومت میں آل پارٹیز کانفرنس میں جمعیت علماء اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ آل پارٹیز کانفرنس میں شریک جماعتوں نے الیکشن کو مسترد کردیا، دوبارہ انتخابات کرانے کے لیے تحریک چلائیں گے۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ کانفرنس میں تمام جماعتوں نے اتفاق کیا کہ کوئی بھی رکن حلف نہیں اٹھائے گا البتہ شہباز شریف نے اس کی مخالفت کی تھی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں