The news is by your side.

Advertisement

پانامہ لیکس،حکومت کاچیف جسٹس کو خط لکھنے کافیصلہ، ذرائع

اسلام آباد: حکومت نے پانامہ لیکس پر جوڈیشل کمیشن کی تشکیل کیلئے چیف جسٹس کو خط لکھنے کا فیصلہ کرلیا۔

وزیراعظم نوازشریف کی زیرصدارت وفاقی وزرا اوررہنماؤں کااہم اجلاس ہوا،وزیراعظم کی پارٹی رہنماؤں کے ساتھ کی ساتھ طویل مشاورت اجلاس کی اندرونی کہانی اے آر وائی نیوز نے حاصل کرلی۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے وزیرقانون سے پانامالیکس پرتجاویزمانگیں، تو وزیرقانون نے اجلاس میں عام انتخابات کرانے کی تجویزدی، لیکن شرکا نے عام انتخابات کی تجویزسےاتفاق نہیں کیا۔

شرکا نے پانامالیکس پرچیف جسٹس کوخط لکھنے پر اتفاق کیا، حکومت چوبیس سے اڑتالیس گھنٹے میں یہ خط لکھے گی،اجلاس میں یہ بھی فیصلہ ہوا کہ اس ضمن میں سیاسی جماعتوں سےمزیدمشاورت نہیں کی جائیگی۔

اجلاس سے خطاب میں وزیراعظم نے کہا کہ ملک کو اندھیروں سے نکالنے کاعمل جانفشانی سےجاری رکھیں گے،عدم استحکام سےعوامی خوشحالی روکنےکی اجازت نہیں دی جائیگی۔

وزیراعظم کاکہنا تھا کہ ہم نے اقتدار کے بجائے ہمیشہ اقدار کو ترجیح دی اللہ کے فضل سے ہمارا دامن صاف ہے،ماضی میں بھی کڑے سے کڑے احتساب سے سرخرو ہوئے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہمارا مقصد پاکستان کو برسوں پرانے مسائل کی دلدل سے نکالناہے،مسائل کی وجہ سے ہم دیگراقوام سے پیچھے رہ گئے ہیں عدم استحکام پیدا کرکےخوشحالی روکنےوالےکبھی کامیاب نہیں ہونگے قوم کسی کو تعمیر و ترقی میں خلل ڈالنے نہیں دے گی۔

اجلاس میں وفاقی وزرا کا کہنا تھا کہ موجودہ حالات سے بعض سیاسی عناصر فائدہ اٹھانے کی کوشش کررہے ،موجود پرو پیگنڈہ کا نشانہ وزیر اعظم کے خاندان نہیں بلکہ ملک کا سیاسی نظام ہے ، بعض عناصر ملک میں افراتفری پھیلا کر سیاسی عمل کو سبو تاژ کر نا چاہتے ہے ۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اجلاس میں خواجہ آصف موجود نہیں تھے، اپوزیشن نےحکومت سے چیف جسٹس کی سربراہی میں کمیشن کامطالبہ کررکھاہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں