The news is by your side.

Advertisement

سندھ حکومت کی جانب سے پولیس رولز میں تبدیلی، حکام تشویش میں مبتلا

کراچی : سندھ حکومت کی جانب سے پولیس رولز میں تبدیلی نے حکام کو تشویش میں مبتلا کردیا ، پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ پہلےہی اتنی مشکل سے ملزمان کوپکڑتے ہیں، اب اگراس حد تک پابندی لگ گئی توکیسے کام کریں گے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ حکومت کی جانب سےپولیس رولز میں تبدیلی پر پولیس حکام نے تشویش کا اظہار کردیا ہے ، پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ واضح طور پرپتہ چلےکہ کن کیسزمیں کہاگیاہے، پہلےہی اتنی مشکل سے ملزمان کوپکڑتے ہیں، اب اگراس حد تک پابندی لگ گئی توکیسے کام کریں گے، شعبہ تفتیش کےلیے یہ رول چیلنج ہوگا۔

یاد رہے سندھ کابینہ نے پولیس رولز کے قانون 26 میں ترمیم کرنے کی منظوری دے دی ، جس کے تحت پولیس ایف آئی آر میں نام آنے سےملزموں کوگرفتار نہیں کرے گی، پولیس شواہد اکٹھے کرنے کے بعد گرفتاری کی اجازت لیکر گرفتارکرے گی۔

اس حوالے سے مشیر قانون سندھ بیرسٹرمرتضیٰ وہاب نے کہا کہ پاکستان کےکرمنل جسٹس سسٹم میں ایک سقم ہے، ایف آئی آرکٹتےہی ملزم کوگرفتارکرلیاجاتا تھا، اب جب تک جرم ثابت نہ ہوگرفتاری نہیں ہوگی۔

بیرسٹرمرتضیٰ وہاب کا کہنا تھا کہ بےگناہ افرادکوگرفتارکرلیاجاتاہے، ایسی گرفتاریوں سےجیلوں اورعدلیہ پربوجھ بڑھتاہے، تفتیشی افسر ایف آئی آرکی بنیادپرگرفتار نہیں کرےگا، آئی اوطلب کرنےکےبعدتفتیش کرےگاپھرگرفتاری ہوگی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں