توانائی سیکٹر کے گردشی قرضے 648 ارب روپے ہوگئے، اسٹیٹ بینک -
The news is by your side.

Advertisement

توانائی سیکٹر کے گردشی قرضے 648 ارب روپے ہوگئے، اسٹیٹ بینک

کراچی : بجلی چوری اور لائن لاسسز کے باعث بل ادا کرنے والے صارفین پر مزید بوجھ متوقع ہے، زیر گردش قرضوں کا حجم چھ سو اڑتالیس ارب روپے ہوگیا۔

حکومت اور محکمے کی نااہلی کا بوجھ بھی اب ریگولر صارفین کو اٹھانا ہوگا، بجلی چوری اورلائن لاسسزکے وصولی بھی بل ادا کرنے والے صارفین سے کی جائے گی۔

مرکزی بینک کی رپورٹ کے مطابق دوہزار پندرہ میں ملکی پاور سیکٹر کی کارکردگی کافی خراب رہی، بجلی پیداوار میں معمولی بہتری آئی، عالمی منڈیوں میں خام تیل کی قیمتوں میں کمی سے فرنس آئل کی قیمت میں تیس فیصد کمی ہوئی مگر چوری اور لائن لاسسز کے باعث صارفین کے بوجھ میں اضافہ ہوا۔۔

رپورٹ کے مطابق مالی مشکلات کے باعث نجی پاور پلانٹس بھی پیداوار بڑھانے میں تذبذب کا شکار رہے، سال دوہزار پندرہ میں خام تیل قیمت میں کمی کے باعث پاور سیکٹر سبسیڈی میں سترہ ارب روپے کی کمی آئی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں