پاکستان پیٹرولیم کمپنی میں بدعنوانی کی رپورٹ عدالت میں پیش -
The news is by your side.

Advertisement

پاکستان پیٹرولیم کمپنی میں بدعنوانی کی رپورٹ عدالت میں پیش

اسلام آباد: پاکستان پیٹرولیم کمپنی (پی پی ایل) میں بدعنوانی و بے ضابطگیوں سے متعلق رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع کروادی گئی۔ رپورٹ میں برطانوی کمپنی کے اثاثوں کی خریداری میں گھپلوں کا انکشاف ہوا ہے۔

تفصیلات کے مطابق قومی احتساب بیورو (نیب) نے پاکستان پیٹرولیم کمپنی میں بدعنوانی و بے ضابطگیوں سے متعلق رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع کروادی۔

رپورٹ میں برطانوی کمپنی کے اثاثوں کی خریداری میں گھپلوں کا انکشاف ہوا۔

نیب رپورٹ میں بتایا گیا کہ پی پی ایل نے اثاثے 12 کروڑ ڈالر کی زائد قیمت پر خریدے، اثاثوں کی مالیت 6 کروڑ ڈالر تھی، 18 کروڑ ڈالر میں خریدے گئے۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ نیب نے ذمے داران و ملزمان کے خلاف انکوائری مکمل کرلی۔ انکوائری میں چیک ری پبلک کے شہری کی بطور بینی فشری نشاندہی کی گئی۔

رپورٹ میں پی ایس او اور آئل کمپنی کے معاہدے پر بھی سوالات کیے گئے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ معاہدے سے آئل کمپنی کو مالی فائدہ پہنچایا گیا۔

نیب کا کہنا ہے کہ قانونی تقاضے پورے کرنے کے بعد ریفرنس دائر کیا جائے گا، وزارت پیٹرولیم، پی ایس او، او جی ڈی ایس ایل اور دیگر کی تحقیقات بھی جاری ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں