The news is by your side.

Advertisement

حکومت مخالف’ عوامی مارچ ‘ کا آغاز

کراچی: پاکستان پیپلز پارٹی کے عوامی مارچ کا آغاز ہوگیا ، چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے ‘عوامی مارچ’ کے آغاز پر ہی ’گو سلیکٹڈ گو‘ کا نعرہ لگا دیا۔

تفصیلات کے مطابق پیپلز پارٹی نے حکومت کے خلاف ‘ عوامی مارچ’ کا آغاز مزار قائد سے کیا، عوامی لانگ مارچ کی قیادت کرنے کے لیے پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ اور دیگر ارکان اسمبلی کے ہمراہ مزارِ قائد پہنچے، جہاں انہوں نے شرکا سے خطاب بھی کیا۔

اس موقع پر سیکڑوں کارکنان درجنوں گاڑیوں میں شہر اور ملک کے دیگر حصوں سے مزار قائد پہنچے، کارکنان نے پارٹی پرچم اٹھارکھے تھے جب کہ وہ وقفے وقفے سے حکومت کے خلاف نعرے بازی کرتے رہے۔

آصفہ نے بھائی کو امام ضامن باندھا

لانگ مارچ میں شرکت سے قبل شہید بے نظیر بھٹو کی صاحبزادی آصفہ بھٹو زرداری نے اپنے بھائی چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کے بازو پر امام ضامن باندھا،(یاد رہے کہ شہید بے نظیر بھٹو جب 2007 میں وطن واپسی آئیں تھی تو انہیں بھی امام ضامن باندھا گیا تھا)۔

عوامی لانگ مارچ میں شرکت کے لیے مزارِ قائد پہنچنے والے پیپلز پارٹی کے کارکنان نے بلاول بھٹو زرداری کا ’وزیرِ اعظم بلاول بھٹو‘ کے نعروں سے بھرپور استقبال کیا، پی پی پی کارکنوں کے فلک شگاف نعروں سے مزارِ قائد کے اطراف کا علاقہ گونج اٹھا۔

بلاول بھٹو کا جذباتی خطاب

لانگ مارچ کے آغاز پر بلاول بھٹو نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ نیازی کو بھگا کر جمہوری نظام لائیں گے، عمران خان کی حکومت کرپٹ ترین حکومت ہے جس نے کرپشن ختم کرنے وعدہ کیا مگر اس کے دورحکومت میں کرپشن کے سارے ریکارڈ توڑ چکے ہیں۔

چیئرمین پی پی نے کہا کہ نالائق نیازی نے ملک کی معیشت تباہ کردی، تین سال دیکھ چکے اب سلیکٹڈ اور کٹھ پتلی کو گھر جانا ہے، اس موقع پر بلاول نے گو سلیکٹڈ گو کے نعرے بھی لگوائے۔

بلاول بھٹو نے الزام عائد کیا کہ حکومت 18ہویں ترمیم کو ختم کر رہی ہے ، این ایف سی ایوارڈ نہیں دے رہی ، وفاق نے سندھ کے ہاتھ باندھ دیے ہیں ، ہم کم وسائل کے ساتھ صوبے کی خدمت کر رہے ہیں۔

بلاول بھٹو نے اپنے خطاب میں کہا کہ عمران خان کو بھگائیں گے تو ہی تمام صوبوں کو ان کا حق ملے گا، وقت آ گیا کہ ہم تحریک عدم اعتماد لیکر آئیں اور ہر پاکستانی کے حقوق کا تحفظ کریں۔

واضح رہے کہ پہلے روز مارچ کے شرکاء ٹھٹھہ اور سجاول سے ہوتے ہوئے بدین پہنچیں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں