site
stats
پاکستان

پیپلزپارٹی کےاقلیتی رہنماء شہبازبھٹی کی آج پانچویں برسی ہے

فیصل آباد: پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنما، آل پاکستان مینارٹیز الائنس کے سربراہ و سابق وفاقی وزیر اقلیتی امور آنجہانی شہباز بھٹی کی پانچویں برسی آج منائی جارہی ہے، اس موقع پر فیصل آباد سمیت مختلف شہروں کے چرچز میں خصوصی تعزیتی تقریبات کا انعقاد کیا گیا۔

نامعلوم مسلح شدت پسندوں کے ہاتھوں 2 مارچ 2011 کوقتل ہونے والے پاکستان کے اقلیتی امور کے وفاقی وزیر شہباز بھٹی 9 ستمبر1968 میں فیصل آباد کے قریب خوش پورمیں پیدا ہوئے ۔

وہ اپنے معمول کے مطابق اپنی والدہ سے ملنے کے بعد مصروفیات کا آغاز کرتے تھے اور بدھ کو جب وہ والدہ سے ملنے کے بعد وفاقی کابینہ کے اجلاس میں شرکت کے لیے جا رہے تھے تو تین مسلح افراد نے ان کی گاڑی کو روک کر انہیں گولیاں مار کر قتل کردیا۔

پولیس کے مطابق وہ اپنی والدہ کے احترام کی وجہ سے جب ان کے پاس جاتے تو پولیس کو ساتھ نہیں لے جاتے تھے۔

کیتھولک مسلک سے تعلق رکھنے والے شہباز بھٹی نے پہلے ’کرسچن لبریشن فرنٹ‘ بنایا اور بعد میں ’آل پاکستان مائنارٹیز الائنس‘ تشکیل دیا۔ سترہ کروڑ سے زیادہ آبادی والے مسلمان اکثریتی ملک پاکستان میں ہندوؤں کے بعد کرسچن دوسری بڑی اقلیت ہے، جن کی تعداد تقریبا اٹھائیس لاکھ کے قریب ہے۔

شہباز بھٹی اقلیتوں کے مسائل کے حل، بین المذاہب ہم آہنگی اور انسانی حقوق کے لیے کام کرتے رہے اور انہیں ایسی کوششوں پر فِنلینڈ، امریکہ اور کنیڈا سے ایوارڈ بھی مل چکے ہیں۔

سنہ دو ہزار دو کے انتخابات میں انہوں نے خود رکن قومی اسمبلی بننے کو ترجیح نہیں دی بلکہ ’آل پارٹیز مائنارٹی الائنس‘ کے پروفیسر مشتاق وکٹر کو رکن منتخب کروایا۔

پروفیسر مشتاق وکٹر بعد میں پرویز مشرف کی جانب سے پیپلز پارٹی کے توڑے ہوئے اراکین کے گروپ ’پیٹریاٹ‘ میں شامل ہوگئے جس کے بعد ساتھیوں کے کہنے پر سنہ دو ہزار آٹھ کے انتخابات میں اقلیت کے لیے مخصوص نشستوں پر پیپلز پارٹی کے ٹکٹ پر شہباز بھٹی خود منتخب ہوئے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top