site
stats
پاکستان

پاراچنارا دھماکہ: وزیراعظم سمیت سیاسی رہنماؤں کی شدید مذمت

اسلام آباد: وزیراعظم نوازشریف نے پاراچناردھماکےمیں جاں بحق ہونے والے افراد کے لواحقین سے تعزیت کی ہےاور قیمتی جانوں کے ضیاع پر اظہار افسوس کیا ہے۔

تفصیلات کےمطابق وزیراعظم پاکستان نوازشریف نے پاراچنار سبزی منڈی میں دھماکے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہےکہ دھماکے میں جاں بحق افراد کے لواحقین سے تعزیت کی ہے۔

وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار نے پارا چنار دھماکے کا نوٹس لیتے ہوئے دھماکے میں ہونے والے جانی ومالی نقصان پر افسوس کا اظہار کیا ہے اور متعلقہ حکام سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر پاراچنار دھماکے شدید مذمت کرتے ہوئے کہاہےکہ عوامی مقامات کی سیکورٹی مزید سخت کی جائے۔

سابق صدر آصف علی زرداری نے پارا چنارمیں دہشت گردی کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کی نرسریوں کوختم کرناہوگا۔

آصف علی زرداری نے کہا کہ شہیدوں کےورثاکےغم میں شریک ہیں،اور زخمیوں کی صحت یابی کے لیے دعاگوہیں۔

پاکستان پیپلزپارٹی کے سربراہ بلاول بھٹوزردای نے پاراچنار دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے کہاکہ جاں بحق افرادکےلواحقین کےغم میں برابرکےشریک ہیں۔

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا دہشت گردوں کو شکست دینےکے لیے عوام کوہماراساتھ دیناہوگا۔

وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے پاراچنار کے دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ہےکہ دہشت گرد کارروائیاں قوم کا عزم کمزور نہیں کرسکتیں۔

وزیراعلیٰ بلوچستان ثنااللہ زہری نے پاراچنار سبزی منڈی میں دھماکےکی مذمت کرتے ہوئے کہا ہےکہ بزدل دہشت گردمعصوم لوگوں کونشانہ بنارہےہیں۔

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے پاراچنار میں ہونے والے دھماکے شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہےکہ وہ دھماکے میں جاں بحق افراد کے لواحقین کے غم میں برابرکےشریک ہیں۔

گورنر خیبرپختونخواہ ظفر اقبال جھگڑا نے پاراچنار دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ زخمیوں کو طبی امداد دی جارہی ہے۔انہوں نے کہا کہ دہشت گرد آسان ہدف کو نشانہ بناتے ہیں۔

جماعت اسلامی کے امیر سراج نے الحق نے پاراچنار دھماکے کی شدید مذمت کی اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کے لیے دعاکی۔

مزید پڑھیں: کرم ایجنسی:پاراچنارسبزی منڈی میں دھماکہ،20افراد جاں بحق

واضح رہےکہ آج صبح پاراچنارسبزی منڈی میں دھماکے کے نتیجے میں 20افراد جاں بحق جبکہ 40 سےزائدافراد زخمی ہوئے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top