The news is by your side.

Advertisement

حکومت کی زبردست معاشی پالیسی، نجی شعبے کو قرض کی ادائیگی میں ریکارڈ اضافہ

ٹیکس فائلرز کی تعداد میں 34 فیصد اضافہ ہوا

اسلام آباد: وفاقی وزیرخزانہ اسد عمر نے کہا ہے کہ جولائی تا اکتوبر نجی شعبے کو قرض کی ادائیگی میں 227 فیصد اضافہ ہوا۔

تفصیلات کے مطابق تحریک انصاف کی معاشی پالیسی کے ملکی معیشت پر مثبت اثرات نمودار ہونا شروع ہوگئے جس کی سب سے بڑی نشانی یہ ہے کہ حکومت نے معیشت کو استحکام دینے کے لیے قرض ادا کرنا شروع کردیے۔

وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر کا کہنا ہے کہ جولائی تااکتوبرنجی شعبےکوقرضوں کی ادائیگی میں 227فیصداضافہ ہوا جبکہ مالی سال کے ابتدائی چار ماہ میں نجی شعبےکو حکومت کی طرف سے 360ارب کےقرض دیےگئے۔

انہوں نے بتایا کہ جولائی تانومبر 212 ارب روپےکے زرعی قرض دیےگئے جبکہ گزشتہ سال اسی عرٖ صےمیں نجی شعبےکو 110 ارب کےقرض دیےگئےتھے۔

یہ بھی پڑھیں: مقررہ تاریخ کے بعد ٹیکس ریٹرن جمع کرانے والوں پر کوئی جرمانہ نہیں‌ ہوگا، حکومتی اعلان

اُن کا کہنا تھا کہ گزشتہ سال اسی عرصےمیں زرعی قرضوں کاحجم156ارب روپےتھا جبکہ رواں سال زرعی قرضوں میں 36 فیصدکا اضافہ ہوا۔

وفاقی وزیر خزانہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ ٹیکس ریٹرن جمع کرانے والوں کی تعداد میں 34 فیصد اضافہ ہوا، 17 دسمبر 2018 تک چودہ لاکھ 92 ہزار 507 لوگوں نے ریٹرن جمع کرائے۔

اسد عمر نے ٹیکس ریٹرن جمع کرانے والے تاجروں، تنخواہ داروں اور سرمایہ کاروں کا تہہ دل سے شکریہ بھی ادا کیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں