site
stats
پاکستان

مقبوضہ کشمیر: 12 افراد کی شہادت کے بعد وادی میں احتجاج

سرینگر: مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم بدستور جاری ہیں۔ 2 دنوں میں 12 کشمیریوں کی شہادت کے بعد پوری وادی سراپا احتجاج ہے۔

تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں نوجوانوں کی شہادت کے خلاف حالات کشیدہ ہیں۔ دکانیں بند اور تعلیمی ادارے ویران ہیں۔ سنسان سڑکوں پر بھارتی فوجیوں کا گشت جاری ہے۔

مزید پڑھیں: بھارتی فوج کی فائرنگ سے 12 کشمیری شہید

بھارتی فورسز کی وحشیانہ کارروائی کے خلاف مقبوضہ کشمیرمیں مکمل ہڑتال ہے۔ بھارت کا انتخابی ڈھونگ بھی کشمیری عوام نے ناکام بنا دیا جس کے بعد اننت ناگ میں انتخاب ملتوی کرنا پڑا۔

مقبوضہ وادی میں تمام کاروباری مراکز بند اور ٹرانسپورٹ معطل ہے۔ کٹھ پتلی انتظامیہ کی جانب سے انٹرنیٹ سروس بھی بند کردی گئی ہے۔

بھارتی فوج نے کئی حریت رہنماؤں کو بھی نظر بند کر رکھا ہے۔ حریت رہنماؤں کا کہنا ہے کہ انتخابی بائیکاٹ نے بتا دیا کہ کشمیری عوام بھارت سے آزادی چاہتے ہیں۔

مزید پڑھیں: بھارت ہوش کے ناخن لے ورنہ کشمیر گنوا دے گا، فاروق عبداللہ

یاد رہے کہ گذشتہ روز قابض فوج نے مقبوضہ کشمیر کے ضلع بڈگام میں پر امن مظاہرین پر فائرنگ کر کے 12 افراد کو شہید کردیا تھا۔ اس موقع پر پیلٹ گنوں اور آنسو گیس کا بھی وحشیانہ استعمال کیا گیا جس کے نتیجے میں 2 خواتین سمیت 20 مظاہرین زخمی ہوگئے تھے۔

مقبوضہ کشمیر میں گزشتہ سال 8 جولائی کو نوجوان حریت پسند رہنما برہان وانی کو بھارتی فورسز نے 2 ساتھیوں سمیت ماورائے عدالت قتل کیا تھا جس کے بعد سے اب تک 100 افراد شہید اور 15 ہزار سے زائد زخمی ہو چکے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top