The news is by your side.

Advertisement

پی ٹی آئی نے الیکشن کمیشن کا فیصلہ چیلنج کر دیا

الیکشن کمیشن کی جانب سے مخصوص نشستوں پر نوٹیفکیشن روکنے کا فیصلہ ہائیکورٹ میں چیلنچ کر دیا گیا۔

تحریک انصاف کی ایم پی اے زینب عمیر نے اظہر صدیق کی وساطت سے درخواست دائر کی کردی۔ درخواست میں الیکشن کمیشن، ممبران الیکشن کمیشن اور مسلم لیگ ن سمیت دیگر کو فریق بنایا گیا ہے۔

درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ الیکشن کمیشن نے آئین اور قانون کے برعکس فیصلہ سنایا۔ الیکشن کمیشن نہ تو ٹریبونل ہے اور نہ ہی عدالت ہے۔

الیکشن کمیشن عدالت کے اختیارات استعمال نہیں کر سکتا آئین کا آرٹیکل 224 کے تحت الیکشن کمیشن نوٹیفکیشن جاری کرنے کا پابند ہے۔ عدالت الیکشن کمیشن کا فیصلہ معطل اور ممبران کا نوٹیفکیشن جاری کرنے کا حکم دے۔

واضح رہے کہ پنجاب کی مخصوص نشستوں پر الیکشن کمیشن نے محفوظ فیصلہ سنایا تھا جس میں ضمنی انتخابات تک پی ٹی آئی مخصوص نشستوں کا نوٹیفکیشن روکنے کا فیصلہ سناتے ہوئے کہا گیا ہے کہ ضمنی الیکشن نتائج کے بعد مخصوص نشستوں کا نوٹیفکیشن جاری کیا جائیگا۔

چیف الیکشن کمشنرکی سربراہی میں 5 رکنی کمیشن نےدرخواست کی سماعت کی تھی اور فریقین کے وکلا کےدلائل اور جواب الجواب کے بعد فیصلہ آج ہی محفوظ کیا گیا تھا۔

درخواست کی سماعت پر اٹارنی جنرل اورایڈووکیٹ جنرل پنجاب بھی الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے جبکہ پی ٹی آئی کے وکیل فیصل چوہدری اور ن لیگ کے وکیل خالد اسحاق نے دلائل دیے۔

واضح رہے کہ الیکشن کمیشن نے گزشتہ ماہ پنجاب اسمبلی کے 25 منحرف ارکان اسمبلی کو نااہل قرار دیتے ہوئے ڈی نوٹیفائی کیا تھا۔ الیکشن کمیشن کے فیصلے میں 20 جنرل نشستوں کے علاوہ 5 مخصوص نشستوں کےارکان کی برطرفی بھی شامل تھی اور ان مخصوص نشستوں میں 3 خواتین اور 2 اقلیتوں کی نشستیں شامل ہیں۔

پنجاب اسمبلی سے ڈی سیٹ اراکین کی خالی نشستوں پر الیکشن کمیشن کی جانب سے 17 جولائی کو ضمنی انتخابات کا اعلان کیا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں