The news is by your side.

Advertisement

بِکنے کا اندیشہ، پی ٹی آئی ارکان اسمبلی ایک ہوٹل سے دوسرے میں منتقل

کراچی: ہارس ٹریڈنگ کے اندیشے سے پی ٹی آئی اور اتحادی ارکان اسمبلی کو کراچی میں ایک ہوٹل سے دوسرے منتقل کر دیا گیا۔

ذرائع کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کی سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ روکنے کے لیے حکمت عملی کے تحت ارکان اسمبلی کراچی میں ایک ہوٹل سے دوسرے ہوٹل منتقل کر دیے گئے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ممکنہ طور پر ووٹ بینک محفوظ کرنے کے لیے پی ٹی آئی ارکان کو ایک سے دوسرے ہوٹل منتقل کیا گیا، گزشتہ روز کراچی کے نجی ہوٹل میں پی ٹی آئی ارکان اسمبلی کے لیے بکنگ کی گئی تھی۔

گزشتہ رات ہی دوسری جماعتوں کے ارکان بھی نجی ہوٹل میں قیام کے لیے پہنچے تھے، تاہم کچھ ارکان نے اس پر ناراضی کا بھی اظہار کیا تھا اور رات گئے کچھ ارکان اپنے گھروں کو چلے گئے تھے۔

پی ٹی آئی اراکین کے لیے ہوٹل میں کمرے بُک، تیسرے رکن کی بھی اغوا کی تردید

ذرائع کا کہنا ہے کہ اس وقت ایم کیو ایم ارکان قیادت کے ساتھ شاہراہ فیصل کے نجی ہوٹل میں موجود ہیں، ایم کیو ایم اور پی ٹی آئی ارکان کل اپنے ہوٹلز سے اسمبلی ووٹ کے لیے پہنچیں گے۔

تحریک انصاف کے 30 اراکین اسمبلی میں سے 15 نجی ہوٹل میں قیام پذیر ہیں، جی ڈی اے کے 14 میں سے کوئی بھی رکن ہوٹل میں نہیں ٹھہرا، جب کہ ایم کیو ایم پاکستان کے بیش تر اراکین ہوٹل میں قیام پذیر ہیں۔

ذرائع کے مطابق ارکان پر ووٹ کے لیے رابطوں اور دباؤ کی اطلاعات پر ان کے لیے محفوظ جگہ کا انتظام کیا گیا۔ تاہم بعض ایم پی ایز کا کہنا تھا کہ لگتا ہے ہم پر شک کیا جارہا رہا ہے، عمران خان کے سپاہی ہیں اور ہدایت کے مطابق ووٹ دیں گے لیکن ہم ہوٹل کی بجائے گھروں میں رہنا چاہتے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں