The news is by your side.

Advertisement

تحریک انصاف کی گھوسٹ ووٹرز کے خلاف کارروائی

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف نے پارٹی میں جمہوری رویوں کو فروغ دینے کے لئے انٹرا پارٹی انتخابات کرانے کا فیصلہ کیا تو ایک کے بعد ایک مشکل انتخابات کی راہ میں آڑے آنے لگی، پہلے جسٹس (ر)وجیہ الدین اور پھر تسنیم نورانی کی صورت میں پارٹی کو دو چیف الیکشن کمشنرز سے ہاتھ دھونا پڑا، پارٹی میں دھڑے بندی ہونے لگی اور مرکزی رہنماؤں کے آپسی اختلافات شدت اختیار کرنے لگے، غرض یہ کہ انٹرا پارٹی انتخابات تحریک انصاف کے گلے کی ہڈی بن گئے، یہاں تک کہ سربراہ تحریک انصاف عمران خان کو پارٹی انتخابات ملتوی کرنا پڑے۔

ان تمام معاملات کے باوجود تحریک انصاف نے نئے چیف الیکشن کمشنر سینیٹر نعمان وزیر کی سربراہی میں رمضان المبارک کے فوری بعد پارٹی انتخابات کروانے کا بیڑہ اٹھایا۔ اس ساری صورت حال کے دوران موبائل سمز کے ذریعے پارٹی ممبر سازی کا عمل جاری تھا کہ اے آر وائی نیوزنے پیسو ں کے عوض پی ٹی آئی کی فراڈ ممبر سازی کا انکشاف کیا۔

منظر عام پر آنے والی ویڈیو میں گاؤں دیہات کے سادہ لوح افراد کو فی کس دس ہزار روپے کے عوض تحریک انصاف کی ممبر شپ حاصل کرنے کا جھانسہ دیا جارہا تھا۔اس صورت حال کے پیش نظر اسلام آباد میں سینیٹر نعمان وزیر کی زیر صدارت پی ٹی آئی الیکشن کمیشن کااعلی سطحی ہنگامی اجلاس طلب کیا گیا جس میں پارٹی کے صوبائی الیکشن ممبران نے بھی شرکت کی۔

اجلاس میں اب تک ہونے والی پارٹی ممبر سازی کے عمل کا تفصیلی جائزہ لیا گیا،گھنٹوں جاری رہنے والے اجلاس کے بعد پی ٹی آئی الیکشن کمیشن اس نتیجے پر پہنچا کہ انٹرا پارٹی انتخابات کے لئے دو لاکھ اسی ہزار گھوسٹ ووٹرزرجسٹرڈ ہو چکے ہیں،اسی اجلاس کے دوران معلوم ہوا کہ انٹرا پارٹی انتخابات کے لئے ملک بھر سے کل ستائیس لاکھ پانچ ہزار بانوے ووٹرز نے رجسٹریشن کروائی جس میں سے چوبیس لاکھ پچیس ہزار چھ سو بیاسی ممبران کے ڈیٹا کی تصدیق ہو سکی۔

پنجاب سے ایک لاکھ نواسی ہزار،جبکہ خیبر پختون خواہ سے پینسٹھ ہزار نو سو ستر ووٹرز کے ڈیٹا کی تصدیق نہ ہو سکی،ا سی طرح سندھ سے تیرہ ہزار سات سو پچیس،بلوچستان سے چار ہزار دو سو چھ اور اسلام آباد سے تین ہزار نو سو تیرہ،جبکہ فاٹا سے ستائیس ہزار تین سو ننانوے ووٹرز گھوسٹ قرار پائے۔

پارٹی الیکشن کمیشن نے کارروائی کرتے ہوئے انتخابی فہرست سے غیر تصدیق شدہ گھوسٹ ووٹرزکو انتخابی فہرست سے بلاک کر دیا۔ تحریک انصاف کے انٹرا پارٹی انتخابات تا حال تاخیر کا شکار ہیں اورعمران خان کا پارٹی میں جمہوری استحکام کا خواب پوراہونے میں بھی ابھی وقت لگے گا،تاہم پی ٹی آئی نے گھوسٹ ووٹرز کے خلاف بروقت کارروائی کرکے پارٹی کو اپنوں کے ہاتھوں دھاندلی کا شکار ہونے سے بچا لیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں