The news is by your side.

Advertisement

کارکن گرفتار ہونے سے بچیں، عمران خان

اسلام آباد: تحریک انصاف کے کارکنوں نے بنی گالہ کے باہر خیمہ بستی آباد کرلی۔ کارکنوں نے رات وہیں گزاری۔ صبح عمران خان نے کارکنوں سے ملاقات کی اور انہیں 2 نومبر کے لیے تیار رہنے اور گرفتاریوں سے بچنے کی ہدایت کی۔

تفصیلات کے مطابق کل شام شیخ رشید کے جلسے میں شرکت کے لیے آنے والے تحریک انصاف کے کارکنوں نے واپس جانے کے بجائے بنی گالہ کے باہر ہی خیمے لگا لیے اور وہیں رات گزاری۔

بنی گالہ میں رات گئے ہی تندور اور چولہے لگا دیے گئے جبکہ کارکنان کے لیے خصوصی طور خیمے اور بستروں کا بھی انتظام کیا گیا۔

صبح چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کارکنوں سے ملاقات کے لیے بنی گالہ سے باہر آئے جنہیں دیکھ کر کارکنوں کا جوش و خروش اور بڑھ گیا۔ عمران خان نے کارکنان کا خاص خیال رکھنے کی ہدایت دی جس کے بعد کارکنان کے لیے ناشتے کا خصوصی انتظام شروع ہوگیا۔

عمران خان نے کارکنوں کے جذبہ کو سراہا اور ان سے 2 نومبر کے دھرنے کے لیے تیار رہنے کی ہدایت کی۔ انہوں نے ہدایت کی کہ کارکن ایک ساتھ ریلے کی صورت میں اسلام آباد پہنچیں، ٹولیوں کی صورت میں آنے پر پولیس گرفتاریاں کر رہی ہے جو غیر قانونی ہے۔ آپ نے گرفتار ہونے سے بچنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہائی کورٹ نے حکم دیا ہے کہ کسی کو گرفتار نہ کیا جائے اس کے باوجود حکومت گرفتاریاں کر رہی ہے۔

واضح رہے کہ کل سہ پہر شیخ رشید راولپنڈی کے کمیٹی چوک میں جلسہ کرنے جارہے تھے تاہم پولیس نے رکاوٹیں کھڑی کردیں اور کارکنوں کی گرفتاریاں شروع کردیں۔ بعد ازاں شیخ رشید عوامی مسلم لیگ کے ایک کارکن کے ہمراہ موٹر سائیکل پر کمیٹی چوک پہنچے اور کارکنان سے خطاب کیا۔

شیخ رشید کے خطاب کے دوران ہی پولیس نے گرفتاریوں کا سلسلہ شروع کردیا اور 55 سے زائد کارکنان کو حراست میں لے لیا۔ اس سے ایک روز قبل بھی 450 سے زائد کارکنان کو گرفتار کیا گیا تھا۔

دو نومبر کو بتائیں گے عوامی طاقت کیا ہوتی ہے، عمران خان *

دوسری جانب پولیس نے شیخ رشید کے خطاب کے دوران ہی لاٹھی چارج اور شیلنگ شروع کردی۔ شدید شیلنگ سے سیاسی کارکنان سمیت کمیٹی چوک کے اطراف میں رہنے والے افراد اور خود پولیس کے عملے کو بھی سانس لینے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔

پولیس کی شیلنگ سے راولپنڈی میں ایک نومولود بچہ بھی دم گھٹنے کے باعث جاں بحق ہوگیا۔ بچے کے والدین راستے بند ہونے کے سبب بچے کو اسپتال نہ لے جاسکے۔ عمران خان نے واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے اس کا ذمہ دار پنجاب حکومت کو ٹہرا دیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں