The news is by your side.

Advertisement

پی ٹی ایم حملہ ، پانچ فوجی زخمی، جوابی کارروائی میں تین ہلاک 10 زخمی

راولپنڈی: پی ٹی ایم کےرہنما علی وزیر کو ساتھیوں سمیت پاک فوج کی چیک پوسٹ پر حملہ کرنے پر حراست میں لے لیا گیا ، چیک پوسٹ پر حملے میں پانچ فوجی زخمی ہوئے ہیں جبکہ تین حملہ آور ہلاک ہوئے ہیں۔

پاک فوج کے شعبہ نشر و اشاعت کے مطابق میران شاہ کے علاقے میں بویا میں واقع خارکمر چیک پوسٹ پر حملہ کیا ، حملے کا مقصد گزشتہ روز حراست میں لیے گئے مشتبہ دہشت گردوں کو رہائی دلانا تھا۔

آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ چوکی پر حملہ آور گروہ کی فائرنگ کے سبب 5فوجی اہلکارزخمی ہوئے ہیں جنہیں سی ایم ایچ ایچ اسپتال منتقل کردیا گیا ہے اور انہیں طبی امداد فراہم کی جارہی ہے۔فائرنگ کےتبادلےمیں 3حملہ آورمارےگئے جبکہ 10 زخمی بھی ہوئے ہیں۔

پاک فوج نے اعلامیے میں کہا ہے کہ فوج پر حملے کے الزام میں پی ٹی ایم رہنما علی وزیر کو ان کے 8 ساتھیوں سمیت حراست میں لیا گیا ہے جبکہ محسن داوڑ فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔

پی ٹی ایم رہنماؤں کا پاک فوج کی چیک پوسٹ پرحملہ

ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ افراد کیونکہ افواج پر حملے کے الزام میں گرفتار کیے گئے ہیں لہذا ان کے ممبر پارلیمنٹ ہونے کی وجہ سے پراڈکشن آرڈر جاری نہیں کیے جاسکیں گے ، ہاں اسپیکر کو ان کی گرفتاری سے آگاہ کردیا جائے گا۔

یاد رہے کہ یہ واقعہ آج میران شاہ کے علاقے بویا میں پیش آیا جہاں پی ٹی ایم کے رہنما محسن داوڑ، علی وزیر اوران کےساتھی عوام کو پاک فوج اور ریاست کے خلاف اکسا رہے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ محسن داوڑ کی فوج کے خلاف ہرزہ سرائی کا سلسلہ جاری ہے اور محسن داوڑ اور ان کے ساتھیوں نے ہتھیار بھی اٹھا رکھے ہیں۔بتایا جارہا ہے کہ یہ سلسلہ گزشتہ روز ایک مشکوک شخص کی گرفتاری سے شروع ہوا۔ جس کی رہائی کے لیے پی ٹی ایم نے دھرنا شروع کیا اور اشتعال انگیزی پھیلاتے ہوئے آج چیک پوسٹ پر حملہ آور ہوگئے۔

یاد رہے کہ کچھ روز قبل پی ٹی ایم رہنما علی وزیرنے جلسے میں کچھ عرصہ پہلے قومی اداروں کوکھلے عام دھمکیاں دی تھیں کہ میں تمہیں ماروں گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں