The news is by your side.

Advertisement

پی ٹی ایم رہنماؤں کا پاک فوج کی چیک پوسٹ پرحملہ

پشاور: سابقہ قبائلی علاقے میران شاہ میں پشتون تحفظ موومنٹ کے رہنماؤں نے پاک فوج کی چیک پوسٹ پر حملہ کیا ہے،علی وزیرنے کچھ دن قبل علی الاعلان فوج کو دھمکیاں دی بھی دیں تھی۔

تفصیلات کے مطابق یہ واقعہ آج میران شاہ کے علاقے بویا میں پیش آیا جہاں پی ٹی ایم کے رہنما محسن داوڑ ، علی وزیر اور ان کےساتھی عوام کو پاک فوج اور ریاست کے خلاف اکسا رہے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ محسن داوڑ کی فوج کے خلاف ہرزہ سرائی کا سلسلہ جاری ہے اور محسن داوڑ اور ان کے ساتھیوں نے ہتھیار بھی اٹھا رکھے ہیں۔بتایا جارہا ہے کہ یہ سلسلہ گزشتہ روز ایک مشکوک شخص کی گرفتاری سے شروع ہوا۔ جس کی رہائی کے لیے پی ٹی ایم نے دھرنا شروع کیا اور اشتعال انگیزی پھیلاتے ہوئے آج چیک پوسٹ پر حملہ آور ہوگئے۔

یاد رہے کہ کچھ روز قبل پی ٹی ایم رہنما علی وزیرنے جلسے میں کچھ عرصہ پہلے قومی اداروں کوکھلے عام دھمکیاں دی تھیں کہ میں تمہیں ماروں گا۔

اس ساری صورتحال پر تجزیہ ن گار حارث نواز کا کہنا ہے کہ محسن داوڑکوگرفتارکرلیناچاہیے،چیک پوسٹ پرحملہ کرنےوالوں کوگرفتارکرکےمقدمہ چلایاجائے۔

حارث نواز کا کہنا تھا کہ یہ لوگ پاکستان میں رہ رہےہیں لیکن پاکستان کےخلاف بات کررہےہیں،محسن داوڑ،منظورپشتین اوردیگرکوگرفتارکرناچاہیے۔ان کوپتہ لگناچاہیےکہ ریاست کےخلاف بات کرنےپرریاست سزادےگی۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان کوپکڑکران کےخلاف فوجی عدالت میں جلدازجلدکیس چلایاجائے،کیسزچلاکران کوسزادی جائے۔ یہ بھی کہا کہ تمام ارکان اسمبلی کوان کےخلاف آوازاٹھانی چاہیے،تمام جماعتوں کواسمبلی میں ان کےخلاف قراردادلانی چاہیے۔

ایک اور تجزیہ کار نعیم خالد لودھی کا کہناہے کہ پی ٹی ایم کے لوگوں کےراوراین ڈی ایس سےرابطےتھے،ان لوگوں سےمتعلق بات کھل کرسامنےآگئی۔اب حکومت عوام کی مددسےان پرقابوپالےگی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں