The news is by your side.

Advertisement

پنجاب حکومت نے ممکنہ سیلابی صورتحال سے نمٹنے کیلئے پاک فوج کی خدمات طلب کر لی

لاہور : پنجاب حکومت نے ممکنہ سیلابی صورتحال سے نمٹنے کیلئے پاک فوج کی خدمات طلب کر لی ہیں اور تمام متعلقہ اداروں کو کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے فوری اقدامات کی ہدایت کر دی ہے۔

تفصیلات کے مطابق پنجاب حکومت کی طرف سے ممکنہ سیلابی صورتحال سے نمٹنے کیلئے اقدامات تیز کرتے ہوئے پاک فوج کی خدمات طلب کر لی ہیں اور تمام متعلقہ اداروں کو کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے فوری اقدامات کی ہدایت کر دی گئی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ محکمہ صوبائی حکومت نے پاک فوج کی دو کمپنیوں کی خدمات کے لئے درخواست ارسال کی ہے ۔دونوں کمپنیوں کو ضلع قصور میں دریائے ستلج کے علاقوں میں تعینات کیا جائے گا۔

ذرائع کے مطابق محکمہ داخلہ پنجاب نے دریائے ستلج کے علاقوں میں امدادی ٹیمیں روانہ کر دی ہیں، سول ڈیفنس، ریسکیو 1122 و دیگر اداروں کو کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لئے اپنی بھرپور تیاریاں کرنے کی ہدایات بھی جاری کر دی گئی ہیں۔

دریائے ستلج کے کناروں پر موجود آبادی کو محفوظ مقامات پر منتقل کرنے کی ہدایات کر دی گئیں۔

مزید پڑھیں : بھارت نے دریائے ستلج میں پانی چھوڑ دیا، سیلاب کا خطرہ

اس سے قبل وزیراعلیٰ پنجاب کی زیرصدارت اہم اجلاس طلب کرلیا ہے ، جس میں بھارت کی جانب سےدریائےستلج میں پانی چھوڑے جانےپرصورتحال کاجائزہ لیا جائےگا اور امدادی سرگرمیوں کے حوالے سے بھی اقدامات پر غور ہوگا۔

ذرائع کے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب رات گئے تک حفاظتی اورامدادی سرگرمیوں کی نگرانی کرتےرہے اور انتظامیہ اور تمام متعلقہ اداروں کے حکام کو ضروری ہدایات بھی جاری کیں۔

یاد رہے بھارت نے بغیر اطلاع کے دریائے سندھ اورستلج میں پانی چھوڑ دیا، دریاؤں میں طغیانی کے باعث پاکستان میں سیلاب کا خطرہ پیدا ہوگیا ہے۔

بھارت سے چھوڑا گیا ڈھائی لاکھ کیوسک پانی کا ریلا گنڈا سنگھ والا کے مقام سے گزرے گا، جس کا این ڈی ایم اے نے الرٹ جاری کردیا ہے ، انتظامیہ نے قریبی دیہات کےمکینوں کومحفوظ مقامات پرمنتقل ہونےکی ہدایت کرکے اٹاری، پوران، روہیلہ،جمال کوٹ اور سلیمانکی میں کیمپ قائم کردیئے۔

بھارت نے لداخ ڈیم کےپانچ میں سے تین اسپل وے بھی کھول دیے، یہ پانی خرمنگ کےمقام پردریائے سندھ میں شامل ہوگا جبکہ گلگت بلتستان ڈیزاسٹر مینجمنٹ  اتھارٹی نے وارننگ جاری کرکے کھرمنگ ،اسکردو، گلگت اوردیامر کی انتظامیہ کو صورتحال سے آگاہ کردیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں