site
stats
پاکستان

فوج میں قادیانیوں کی ملازمت کو رانا ثناء نے حقائق کے منافی قرار دے دیا

لاہور: وزیرقانون پنجاب رانا ثناء اللہ نے پاک فوج میں قادیانیوں کی ملازمت کے حوالے سے دیے جانے والے بیان کو حقائق کے منافی قرار دیتے ہوئے ڈی جی آئی ایس پی آر کے بیان کی تائید کردی۔

تفصیلات کے مطابق کپٹن صفدر نے قومی اسمبلی کے فلور پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’ہم بحیثیت مسلمان ختم نبوت ﷺ پر مکمل یقین رکھتے ہیں اور قادیانیوں کو برا سمجھتے ہیں، اس لیے جلد ایوان میں بل پیش کریں گے جس کے تحت پاک فوج میں قادیانیوں کو ملازمت دینے پر پابندی ہوگی‘۔

وزیر اعظم پاکستان سمیت تمام سیاستدانوں نے کیپٹن (ر)  صفدر کے بیان کو من گھڑت اور بے بنیاد قرار دیا جبکہ شاہد خاقان عباسی نے تقریر کو ذاتی اظہار خیال اور اشتعال انگیز بیان قرار دیا۔

کیپٹن (ر) صفدر کے بیان پر گزشتہ روز ڈی جی آئی ایس پی آر نے وضاحت پیش کرتے ہوئے کہا کہ فوج کا ہر جوان قادیانی نہ ہونے کا سرٹیفکٹ سائن کرتا ہے، میں نے اور کیپٹن صفدر نے بھی اس پر دستخط کیے مگر شاید کیپٹن صفدر بھول گئے‘۔

پڑھیں: فوج کا ہرجوان قادیانی نہ ہونے کا سرٹیفکیٹ سائن کرتا ہے، آئی ایس پی آر

ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا تھا کہ پاک فوج نیشنل آرمی ہے جس میں مسلمانوں کے ساتھ ہندو، سکھ، عیسائی بھی اپنی ذمہ داریاں سرانجام دیتے ہوئے مادرِ وطن کی حفاظت کررہے ہیں تاہم قادیانیوں کو ملازمت دینے کی باتیں بے بنیاد ہیں۔

وزیرقانون پنجاب رانا ثناء االلہ نے ڈی جی آئی ایس پی آر کے بیان کی تائید کرتے ہوئے کہا کہ کیپٹن (ر) کا بیان حقائق کے منافی ہے، اقلیتوں کے معاملے کو اپنے ذاتی مقاصد کے لیے استعمال نہیں کرنا چاہیے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top