site
stats
پاکستان

قندیل بلوچ قتل کیس میں پیش رفت،دو بھابھیاں بھی گرفتار

ملتان : پولیس نے ماڈل قندیل بلوچ کے قتل کے ملزم وسیم کا ڈی این اے حاصل کرکے ملزم کا پولی گرافک ٹیسٹ بھی لیا گیا جب کہ مقتولہ کی دو بھابھیوں کو حراست میں لے گیا ہے۔

پولیس ذرائع کے مطابق ماڈل قندیل بلوچ کے قتل میں گرفتار مرکزی ملزم وسیم کو جمعہ کے روزعلی الصبح ملتان سے لاہور منتقل کیا گیا اور فرنزک لیبارٹری میں اس کا ڈی این اے ٹیسٹ اور پولی گرافک ٹیسٹ کیا گیاجب کہ قندیل بلوچ کا گمشدہ موبائل فون بھی آبائی گھر سے برآمد کر لیا ہے،تحقیقات کا دائرہ کار بڑھاتے ہوئے پولیس نے قندیل بلوچ کی دو بھابھیوں کو حعاست میں لے کر تھانے منتقل کردیا ہے جہاں اُن سے قتل کے حوالے سے تفتیش کی جا رہی ہے۔

مزید پڑھیے : ماڈل قندیل بلوچ کو قتل کر دیا گیا

سی پی او ملتان اظہر اکرام نے بتایا کہ ملتان پولیس نے قندیل بلوچ قتل کیس کے حوالے سے تفتیش کادائرہ کار بڑھاتے ہوئے اس کی دوبھابھیوں سحرش بتول اور اقبال مائی کو بھی حراست میں لے لیا ہے، جب کہ قندیل بلوچ کے قتل میں اگر کسی قسم کا اجتماعی فیصلہ کیا گیا ہے تو اس پہلو پر بھی پولیس نے تفتیش شروع کردی ہے۔

دوسری طرف وقوعہ کے روز شیرشاہ روڈ ملتان پر واقع گھر سے قندیل بلوچ کا موبائل فون بھی غائب تھا،جو اس کے آبائی گھر شاہ صدرالدین ڈیرہ غازی خان سے مل گیا ہے۔ قندیل بلوچ کے والد نے یہ موبائل پولیس کے حوالے کردیا ہے جس کے بعد قتل کے حوالے اہم انکشافات ہونے کی امید ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top