The news is by your side.

Advertisement

قاضی نذرُ‌السلام اور غلط ڈاک ٹکٹ

قاضی نذرُ السلام نام ور انقلابی شاعر، مصنّف اور موسیقار تھے جنھوں نے برصغیر کے مسلمانوں کے دلوں میں ترنگ اور امنگ پیدا کی اور اپنی شاعری سے ان کے اندر انقلاب اور آزادی کی جوت جگائی تھی۔ آج انھیں بنگلہ دیش کا قومی شاعر تسلیم کیا جاتا ہے۔

شاعری کا مشغلہ اور موسیقی کی مشق جاری رکھتے ہوئے ان کی ان کی شہرت کا آغاز 1920 میں اس وقت ہوا جب انگریزوں کے خلاف ان کی نظم شائع ہوئی۔ وہ باغی شاعر مشہور ہوگئے۔ جب پاکستان دولخت نہ ہوا تھا تو ڈاک ٹکٹوں کا سیٹ 25 مئی 1968ء کو جاری ہوا جو پاکستان کے محکمہ ڈاک نے بنگال کے اس مشہور شاعر قاضی نذرُ الاسلام کی 69 ویں سال گرہ کے موقع پر تھا۔ ہوا یوں کہ ان ڈاک ٹکٹوں پر ان کا سنہ پیدائش 25 مئی 1899ء کے بجائے 1889ء شائع ہوگیا چنانچہ حکومت نے توجہ دلانے پر فوری طور پر یہ ڈاک ٹکٹ واپس لے لیے اور ایک ماہ بعد 25 جون 1968ء کو درست تاریخ والے ڈاک ٹکٹ جاری کیے۔ لیکن غلط سنہ پیدائش والے یہ ڈاک ٹکٹ چند ڈاک خانوں میں فروخت ہوچکے تھے۔ یہ ڈاک ٹکٹ پاکستان سیکیورٹی پرنٹنگ کارپوریشن کے ڈیزائنر فضل کریم نے ڈیزائن کیے تھے۔

قاضی نذر السلام نے 29 اگست 1976 کو وفات پائی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں