سانحہ کوئٹہ پاکستان پر حملہ ہے، سراج الحق -
The news is by your side.

Advertisement

سانحہ کوئٹہ پاکستان پر حملہ ہے، سراج الحق

اسلام آباد: جماعت اسلامی پاکستان کے امیر سراج الحق نے کہا ہے کہ سانحہ کوئٹہ پاکستان پر حملہ ہے، حکومت سو رہی ہے حکمران مدت حکمرانی پورا کرنے کے ذاتی ایجنڈے پر کام کررہے ہیں۔

اسلام آباد میں ملی یکجہتی کونسل کے تحت قومی کانفرنس بہ عنوان عالمی دہشت گردی اور پاکستان کے اختتامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ آج کے دھماکے میں راء اور خاد کے ہاتھوں کو نظرانداز نہیں کیا جاسکتا،دشمن نے بلوچستان کو فوکس کررکھا ہے، حکومت عوام سکیورٹی نہیں دے سکتی تو اسے حکمرانی کرنے کا کوئی حق نہیں، ملک میں مسلح، سیاسی اور معاشی دہشت گردی ہے۔

سراج الحق نے کہا کہ کوئٹہ کے ہونے والے حادثے کی ہم پر زور مذمت کرتے ہیں، کوئٹہ پہ حملہ پاکستان اور20 کروڑ عوام پرحملہ ہے۔ ملک سے باہر بسنے والے بلوچوں کو ملک میں لایا جائے، جو حکومت سیکیورٹی نہیں دے سکتی اسے کوئی حکومت کرنے کا حق نہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ قرآن ہمارا ضابطہ اخلاق ہے، عدالتوں میں 68 سالوں سے ہم نے چیف جسٹس کے ہاتھوں میں قرآن نہیں دیکھا، کیا غریب شہریوں کو علاج کی سہولیات نہ ملنا دہشت گردی نہیں ؟؟؟ ہمارے درمیان لوگ موجود ہیں جنکی غلط پالیسیوں کی وجہ سے معاشی بحران ہے، حکومت اپنی ناکامیوں کا اعتراف کرنے کی بجائے اپنا دورانیہ پورا کر رہی ہے۔ ہمارا ملک تقسیم ہو گیا ہے ہمارا نظام تعلیم تقسیم ہو گیا ہے۔

امیر جماعت اسلامی کا کہنا تھا کہ 98 فیصد وسائل پر دو فیصد نے قبضہ کیا ہوا ہے جو کہ دہشت گردی ہے، جب تک ہمارا گھر ٹھیک نہیں ہوگا ہم انڈیا سے نہیں مقابلہ کرسکتے، یہاں ایسی این جی اوز کام کررہی ہیں جو ہمارے حکمران طبقہ کے بچوں کی ملک سے باہر تربیت کرتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کشمیر جاگیرداروں کا موضوع ہی نہیں ہم غریبوں کا موضوع ہے، ترکی میں ایسا آدمی حکمران بن گیا جو چوراہوں پر شربت بیچتا تھا،اس حکومت سے مطالبات کرنا بھی احمقوں کی جنت میں رہنے کے مترادف ہے، پانامہ لیکس پر تو تین دفعہ وزیراعظم قوم سے خطاب کیا لیکن کشمیر پہ ہونے والے مظالم کے حقائق قوم کے سامنے کیوں نہیں رکھتے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں