The news is by your side.

Advertisement

رہبر کمیٹی کا الیکشن کمیشن کے سامنے احتجاج، افتخار درانی کا کرارا جواب

اسلام آباد: اپوزیشن کی رہبر کمیٹی نے آج الیکشن کمیشن کے سامنے احتجاج کیا اور چیف الیکشن کمشنر سے ملاقات کی، بعد ازاں الیکشن کمیشن کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اکرم درانی نے کہا الیکشن کمیشن سے میڈیا کے ذریعے درخواست کر رہے ہیں پی ٹی آئی فنڈنگ کیس کو روزانہ سنا جائے۔

تفصیلات کے مطابق اپوزیشن نے دھرنا سیاست کی ناکامی پر نئے راستے ڈھونڈنا شروع کر دیے ہیں، آج الیکشن کمیشن میں پی ٹی آئی فنڈنگ کیس کے سلسلے میں رہبر کمیٹی نے کمیشن کے باہر احتجاج کیا۔

اکرم درانی نے کہا کہ پی ٹی آئی فنڈنگ کیس پر الیکشن کمیشن سے درخواست کرتے ہیں کہ کیس میں تاخیر نہ کی جائے، نیب والے ہفتے میں 3 بار ہمیں بلاتے ہیں اور ہم جاتے ہیں، الیکشن کمیشن بھی تاخیر نہ کرے۔

ان کا کہنا تھا کہ فنڈنگ کیس کا فیصلہ آیا تو پی ٹی آئی پوری چلی جائے گی، ہم چاہتے ہیں چیف الیکشن کمشنر تاریخی فیصلہ دے کر جائیں، ان کی مدت کم رہ گئی ہے۔

دریں اثنا، رہبر کمیٹی کی پریس کانفرنس پر پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے کرارا جواب دیا گیا، افتخار درانی نے کہا کہ ن لیگ اور پیپلز پارٹی کی مشکوک فنڈنگ کے خلاف بھی درخواست زیر التوا ہے، مولانا کی آمدن اور اخراجات کا حساب کتاب خود مولانا بھی نہیں جانتے۔

انھوں نے کہا علی بابا بھاگ گیا، اور سہولت کار الیکشن کمیشن کے سامنے جمع ہیں، نیب کو مطلوب افراد الیکشن کمیشن کے سامنے چیخ پکار کر رہے ہیں، جو جتنا بڑا چور ہے اتنی ہی بلند آواز میں چیخ رہا ہے۔

معاون خصوصی افتخار درانی کا کہنا تھا پی ٹی آئی پولیٹیکل فنانس متعارف کرانے والی پہلی جماعت ہے، تحریک انصاف کی مالیات پیشہ ورانہ انداز میں مرتب کی جاتی ہیں، عمران خان کو سپریم کورٹ نے صادق و امین قرار دیا، جب کہ سپریم کورٹ نے اُن کے قائد کو بد دیانت اور خائن قرار دیا، رہزن کمیٹی خفت مٹانے کے لیے قوم کو گمراہ کرنے کی کوشش نہ کرے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں