انتظامیہ نے پارلیمنٹ ہاؤس پر مزید تعیناتی کی درخواست نہیں کی، ترجمان رینجرز security
The news is by your side.

Advertisement

رینجرز نے پارلیمنٹ ہاؤس سے سیکیورٹی واپس بلالی

اسلام آباد: رینجرز نے پارلیمنٹ ہاؤس سے سیکیورٹی واپس بلا لی، ترجمان رینجرز نے کہا ہے کہ اسمبلی اجلاس کے دوران اضافی نفری تعینات کی جاتی ہے جس کی درخواست مقامی انتظامیہ کرتی ہے، مزید تعیناتی کے لیے ایڈمنسٹریٹر نے کوئی خط نہیں بھیجا۔

ذرائع کے مطابق پارلیمنٹ ہاؤس کی سیکیورٹی گزشتہ 2 دن سے اسپیشل سیکیورٹی فورس کررہی ہے جس کی بنیاد پر رینجرز نے اپنی نفری وہاں سے ہٹا دی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ رینجرز سیکیورٹی حکومت کی تحریری درخواست پر دوبارہ تعینات کی جائے گی۔

ترجمان رینجرز کی وضاحت

اس ضمن میں رینجرز کے ترجمان نے بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ پارلیمنٹ ہاؤس پر رینجرز کی نفری معمول کی ڈیوٹی پر تعینات تھی کیونکہ امن و امان کے پیش نظر اجلاس کے دوران اضافی نفری تعینات کی جاتی ہے۔

رینجرزکے ترجمان کا کہنا ہے کہ اضافی نفری کی تعیناتی کے لیے اسلام آباد انتظامیہ درخواست کرتی ہے تاہم ہمیں مزید تعیناتی کے لیے سول ایڈمنسٹریشن کا کوئی خط موصول نہیں ہوا۔

وزیر داخلہ کا نوٹس

وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے پارلیمنٹ ہاؤس سے رینجرز سیکیورٹی ہٹانے کا نوٹس لیتے ہوئے ایف سی کے اضافی دستوں کو تعینات کرنے کی ہدایت کردی، فرنٹیئر کانسٹیبلری کے 30 اہلکار اجلاس کے دوران ڈیوٹی سرانجام دیں گے۔

واضح رہے کہ تین روز قبل نیب عدالت کے باہر رینجرز اہلکاروں نے وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال کو نوازشریف کی سماعت کے دوران احتساب عدالت جانے کی اجازت نہیں دی تھی جس کے بعد وفاقی وزیر داخلہ نے ڈی جی رینجرز اسلام آباد سے جواب بھی طلب کیا تھا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں