پاک بھارت معاہدے کے تحت قونصلررسائی نہیں دی جاسکتی، رحمان ملک rehman-malik
The news is by your side.

Advertisement

پاک بھارت معاہدے کے تحت قونصلررسائی نہیں دی جاسکتی، رحمان ملک

لاہور : سابق وزیر داخلہ رحمان ملک نے کہا ہے کہ کلبھوشن کے معاملے میں عالمی عدالت انصاف نے اختیارات سے تجاوز کیا کیوں کہ پاک بھارت معاہدے کے مطابق کسی دہشت گرد کو قونصلیٹ تک رسائی نہیں دی جاسکتی۔

لاہور میں پیپلز پارٹی رہنما فائزہ ملک کے گھر آمد پرمیڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رحمان ملک نے کہا کہ بھارت کی جانب سے کلبھوشن کا معاملہ عالمی عدالت میں لیجانے پر پاکستان فائدہ اٹھا سکتا ہے لیکن آئی سی جی کا فیصلہ پاکستان کا مقدمہ لڑنے والوں کی ناکامی ہے۔

انہوں نے کہا کہ کلبھوشن دہشت گرد ہے اسے پھانسی ضرور ہونی چاہئے مودی خود دہشت گردوں کا امام ہے اوراسی طرح کشمیرمیں مظالم، بھارت کی جانب سے پانی کی بندش اور بنگلہ دیش کو الگ کرنے کا معاملہ بھی عالمی عدالت کے سامنے رکھنا چاہئے تاکہ بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب ہو۔


پاکستان کا کلبھوشن یادیو تک قونصلر کی رسائی نہ دینے کا فیصلہ


سابق وزیرداخلہ نے کہا کہ سوشل میڈیا پر فیک اکاونٹ بنا کرملکی مفادات کے خلاف پروپیگنڈہ کرنے والوں کے خلاف کارروائی ضرورہونی چاہئے لیکن مکمل طورپرسوشل میڈیا پرقدغن لگا دینا کسی طورمناسب نہیں۔

انہوں نے کہا کہ بانی ایم کیوایم الطاف حسین کے خلاف ریڈ وارنٹ عدالتی احکامات کی روح سے جاری ہوسکتے ہیں اس کے لیے مضبوط کیس بنا کر بھیجنا ہو گا۔


ایران میں رہتے ہوئے دہشتگردی کیلئے افغان سرزمین کا استعمال کیا، کلبھوشن یادیوکا اعتراف


رحمان ملک کا کہنا تھا کہ پاکستان نے مغرب کی جنگ میں دہشت گردی کے خلاف پاکستان نے پچاس ہزار جانوں کی قربانی دی لیکن ٹرمپ نے ہمارا نام تک نہ لیا جس سے پاکستان کے عوام کی دل شکنی ہوئی ہے جس پرمیں نے ٹرمپ کو ٹوئٹر پراپنا احتجاج بھی ریکارڈ کرایا جب کہ ہمارے وزیراعظم خاموش رہے۔

سابق وفاقی وزیرداخلہ رحمان ملک نے پاکستان میں داعش کی موجودگی کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ داعش کے خلاف سخت، موثراور بے رحمانہ کارروائی ہونا چاہیے کیوں کہ دہشت گردوں کسی رعایت کے حقدارنہیں ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں