The news is by your side.

Advertisement

سانحہ مںیٰ ،شہید حجاج کی تعداد 93ہوگئی، 40لاپتہ حجاج کی تلاش جاری

اسلام آباد: سانحہ منیٰ میں شہید پاکستانیوں کی تعداد ترانوے ہوگئی ہے، 40لاپتہ حجاج کی تلاش جاری ہے،سانحہ منی میں پشاور بخشی پل کے رہائشی حاجی ثلاوت خان کی شہادت کی تصدیق ہوگئی ہے.

سعودی عرب میں حج کے دوران منیٰ کےمقام پربھگدڑ کے واقعے کو دوہفتے مکمل ہوچکے ہیں، اب تک درجنوں پاکستانی حاجی لاپتہ ہیں، جنکے لواحقین انتہائی کرب اورتکلیف کی کیفیت میں مبتلا ہیں، بیشتر پاکستانی خاندانوں کو معلوم نہیں کہ ان کے عزیزرشتہ دار زندہ بھی ہیں کہ نہیں.

وفاقی وزیر مذہبی امور سردار محمد یوسف نے اسلام آباد میں نیوز کانفرنس میں بتایا کہ سانحہ منی میں کل نواسی پاکستانی حجاج شہید ہوئے۔ اکتالیس حجاج کے شہید ہونے کی تصدیق ان کے عزیزواقارب نے کی جبکہ اڑتالیس حجاج کے شہید ہونے کی باقاعدہ تصدیق کی گئی۔

وفاقی وزیر مذہبی امور کا کہنا تھا کہ کل تینتالیس افراد لاپتہ ہیں، سرکاری اسکیم کے تحت جانے والے عازمین حج میں سے پانچ جبکہ پرائیویٹ اسکیم کے تحت جانے والے عازمین حج میں سے بارہ لاپتہ ہیں، سعودی عرب میں اقامہ رکھنے والے دس حجاج بھی لاپتہ افراد میں شامل ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ سانحہ کے بعد پاکستانی مشن کی کوششوں سے تین سو انیس لاپتہ حجاج بازیاب کیے گئے، وفاقی وزیر کے مطابق اس وقت باسٹھ پاکستانی سعودی عرب کے اسپتالوں میں ہیں، دیگر زخمیوں کو اسپتالوں سے فارغ کردیا گیا ہے ۔

سردار محمد یوسف نے کہا کہ سعودی عرب سے یوسف رضا گیلانی کے عزیز سمیت تین حجاج کی لاشیں پاکستان لائی گئیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے تسلیم کیا کہ سانحہ کے بعد سعودی سیکورٹی فورسز نے پاکستانی امدادی ٹیموں کو اپنے کام سے روک دیا تھا۔ لاپتہ پاکستانیوں کے حوالے سے بتایا کہ وہ سعودی حکام کے رحم و کرم پر ہیں۔ سعودی حکومت نے سانحہ پر تحقیقاتی کمیٹی قائم کی ہے تاہم پاکستان کا اس کمیٹی میں کوئی کردار نہیں ۔ سردار یوسف نے بتایا کہ انہوں نے سعودی ولی عہد سے ملاقات کی بھی درخواست کی ہے.

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں