The news is by your side.

Advertisement

ایران سے مقابلہ، ایک لاکھ سے زائد امریکی فوجی مشرق وسطیٰ بھیجنے کا نیا منصوبہ تیار

واشنگٹن: امریکا نے ایران سے مقابلہ کرنے کے لیے مشرق وسطیٰ میں ایک لاکھ 20 ہزار فوجیوں کو بھیجنے کا منصوبہ بنالیا ہے۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق امریکی اخبار نے انکشاف کیا ہے کہ نیا امریکی منصوبہ قائم مقام سیکریٹری دفاع پیٹرک شین ہین نے تیار کیا ہے اور اس پر صدر ٹرمپ کے سینئر سیکیورٹی افسران کے ساتھ مشاورت بھی کی ہے۔

امریکی سیکریٹری دفاع کی جانب سے تیار کردہ منصوبے میں کہا گیا ہے کہ اگر ایران امریکی افواج پر حملہ کرتا ہے اور یا وہ اپنے جوہری ہتھیاروں پر کام کی رفتار بڑھاتا ہے تو ایک لاکھ 20 ہزار امریکی فوجیوں کو وسطی ایشیا بھیجا جاسکتا ہے۔

امریکی اخبار کی اس خبر نے جہاں دنیا بھر کی توجہ اپنی جانب مبذول کی وہیں خود امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو بھی بیان جاری کرنا پڑ گیا۔

مزید پڑھیں: جنگ ہوگی نہیں اور مذاکرات ہم نہیں کریں گے، سپریم لیڈر سیّد علی خامنہ ای

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے رپورٹ کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے منصوبے نہیں بنائے ہیں لیکن ساتھ ہی انہوں نے واضح کیا کہ اگر ہم نے ایسا کیا تو اس کے لیے کہیں زیادہ فوجی بھیجیں گے۔

واضح رہے کہ امریکا نے ایران کے ساتھ طے پانے والے تاریخی جوہری معاہدے سے علیحدگی اختیار کرنے کے بعد تہران پر دباؤ ڈالنے اور اس کے گرد معاشی حصار قائم کرنے کے لیے متعدد اقدامات کیے ہیں۔

امریکا اور ایران کے درمیان پیدا ہونے والی کشیدگی کے بعد خلیج فارس میں امریکا نے اپنے دو طیارہ بردار جنگی بحری بیڑے تعینات کیے ہیں، واشنگٹن کے احکامات پر جدید دفاعی میزائل سسٹم پیٹریاٹ بھی جنگی بحری بیڑوں کے ساتھ جا ملا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں