The news is by your side.

Advertisement

قومی اسمبلی میں خواتین سے متعلق نازیبا جملوں پر مذمتی قرارداد منظور

رانا ثناءاللہ سر عام معافی مانگیں: قومی اسمبلی کے اراکین کا مطالبہ

اسلام آباد: قومی اسمبلی میں خواتین سے متعلق نازیبا جملوں پر پاکستان تحریک انصاف کی رکن اسمبلی شیریں مزاری کی پیش کردہ مذمتی قرارداد اتفاق رائے سے منظور کرلی گئی۔

رانا ثناءاللہ کی پی ٹی آئی خواتین کے خلاف نازیبا گفتگو پر تحریک انصاف نے سندھ اور پنجاب اسمبلی میں بھی مذمتی قراردادیں جمع کرادی ہیں، صوبائی محتسب کے دفتر میں بھی درخواست جمع کرادی گئی ہے، رانا ثناءاللہ سے سرعام معافی مانگنے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

قومی اسمبلی کے اجلاس میں اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ نے کہا کہ بجٹ سے پہلے خواتین کے معاملے پر بات ہوگی، یہ اہم معاملہ ہے، خواتین سے متعلق جو زبان استعمال کی گئی وہ افسوس ناک ہے۔ قومی اسمبلی کے اسپیکر ایاز صادق نے کہا ہمارے لیے خواتین قابل احترام ہیں۔

قومی اسمبلی کے اجلاس میں جماعت اسلامی کی ڈپٹی سیکرٹری جنرل اور  رکن قومی اسمبلی عائشہ سید نے کہا کہ خواتین کی عزت کو اداروں میں اچھالا جا رہا ہے، جلسوں میں بھی خواتین کی عزت کو ملحوظ خاطر رکھنا چاہیے، رانا ثناءاللہ ایوان سے معافی مانگیں۔

شہباز شریف نے رانا ثناءاللہ کے بیان پر معافی مانگ لی

مسلم لیگ ن کی رکن قومی اسمبلی نے کہا کہ ہم رانا ثناءاللہ کے بیان کی مذمت کرتے ہیں، شہباز شریف نے اس پر معافی مانگ لی ہے اور مذمت بھی کی، جب انہوں نے معذرت کرلی ہے تومعاملہ ختم کر دینا چاہیے۔

واضح رہے تحریک انصاف کے لاہور جلسے کے بعد رانا ثناءاللہ نے تبصرہ کرتے ہوئے پی ٹی آئی خواتین کے لیے انتہائی نامناسب اور ناشائستہ جملے کہے تھے جس پر نہ صرف تحریک انصاف بلکہ پیپلز پارٹی کی طرف سے بھی شدید رد عمل سامنے آیا تھا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں