The news is by your side.

Advertisement

خاتون کے ہاتھ میں سونا دیکھ کر اندازہ لگا لیتا ہوں اصلی ہے یا نقلی: گرفتار رکشا ڈرائیور

کراچی: شہر قائد میں رکشا ڈرائیوروں کے اسٹریٹ کرائم کی وارداتوں میں ملوث ہونے کا انکشاف ہوا ہے، اس سلسلے میں فرئیر پولیس کے ہاتھوں گرفتار رکشا ڈرائیور نے سنسنی خیز انکشافات کیے۔

تفصیلات کے مطابق ڈیفنس اور کلفٹن کے علاقوں میں وارداتیں کرنے والے رکشا ڈرائیور وقاص کو فرئیر پولیس نے گرفتار کر لیا ہے، گرفتاری کے بعد ملزم وقاص نے اعترافی بیان دیا، اس نے کہا کہ خاتون کے ہاتھ میں سونا دیکھ کر اندازہ لگا لیتا تھا کہ اصلی ہے یا نقلی۔

پولیس کے مطابق گرفتار ملزم نے دہلی کالونی میں خاتون پر تشدد کر کے چوڑیاں بھی اتروائی تھیں، ملزم وقاص نے بتایا کہ ایک واردات کے 5 ہزار سے 10 ہزار ملا کرتے تھے، زیادہ تر وارداتیں ڈیفنس، کلفٹن اور گزری میں کیں، سڑک پر خواتین کو دیکھ کر اندازہ لگایا کرتے تھے کس کے پاس مال زیادہ ہوگا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ 3 رکنی رکشا ڈرائیور گینگ نے دہلی کالونی میں خواتین سے بد سلوکی بھی کی تھی، واقعے کی سی سی ٹی وی فوٹیج کے بعد 2 ملزمان کی گرفتاری عمل میں آئی، جن میں سے ایک وقاص اور دوسرا دلدار خان ہے جب کہ  گینگ میں شامل مرکزی ملزم ریاض تاحال فرار ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  سی ٹی ڈی کے ہاتھوں گرفتار ٹارگٹ کلرز کے سنسنی خیز انکشافات

ایس ایس پی شیراز نزیر کا کہنا تھا کہ ملزمان کے قبضے سے خاتون سے چھینی ہوئی سونے کی دو چوڑیاں اور اسلحہ برآمد کیا جا چکا ہے۔

واضح رہے کہ کراچی میں سی ٹی ڈی کے ہاتھوں گرفتار ہونے والے ایم کیو ایم لندن کے 2 ٹارگٹ کلرز کے بارے میں انکشاف ہوا ہے کہ وہ کے ایم سی اور واٹر بورڈ کے برسوں پرانے ملازم ہیں۔ ملزم اسداللہ انقلابی کا کہنا ہے کہ وارداتوں کے لیے دکان حاصل کر رکھی تھی، بکرا پیڑی، پرندہ مارکیٹ کا ہفتہ شریف آباد تھانے و سیکٹر پر دیتا تھا، عباسی شہید اسپتال میں میں نوکری دی گئی، 3 افراد کو ہوٹل سے اغوا کر کے لیاقت آباد کی دکان میں رکھا۔

گرفتار ٹارگٹ کلر عدنان جانو نے بتایا کہ قتل کے لیے اغوا کیے گئے افراد کی رکھوالی میری ذمہ داری تھی، مجھے پارٹی کی طرف سے واٹر بورڈ میں ملازمت دی گئی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں