The news is by your side.

Advertisement

افراط زر میں اضافہ، یورپی ممالک مہنگائی کی دلدل میں پھنسنے لگے

 یورپی ملکوں میں افراط زر اور مہنگائی میں ہوشربا اضافے کے باعث عوام مہنگائی کی دلدل میں پھنسنے لگے ہیں۔

غیر ملکی میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا کہ جائزہ رپورٹوں کے مطابق یورپی ممالک میں مہنگائی میں اضافے کا رجحان تیزی کے ساتھ جاری ہے، پچھلے چند ماہ کے دوران براعظم یورپ کے ملکوں میں افراط زر کی شرح میں دگنا اضافہ ہوا ہے۔

رپورٹ میں یورپی منڈیوں کی جائزہ وار رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ پورے براعظم خاص طور پر بلقان ریجن کے کئی ملکوں میں غذائی اشیا کی قیمتوں اور زندگی کے دوسرے اخراجات میں اضافے کا رجحان جاری ہے، اور اس میں تیزی سے اضافے کا سلسلہ جاری ہے۔

رونامہ ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق رواں سال یورپی ملکوں میں افراط زر کی شرح دس فیصد سے زائد رہی جبکہ اسٹونیا میں صورت حال کافی بدتر ہے جہاں افراط زر انیس فیصد کی سطح پر پہنچ چکی ہے۔

اس کے علاوہ بلغاریہ کو سولہ فیصد سے زیادہ، جمہوریہ چیک اور رومانیہ کو تیرہ فیصد سے زیادہ، لتھووینیا کو تیرہ فیصد، پولینڈ کو دو فیصد، اور سلوواکیا کو گیارہ فیصد سے زیادہ افراط زر کا سامنا ہے۔

اس سے قبل یورپی ذرائع ابلاغ نے یونان کے محکمہ شماریات کے جاری کردہ اعدادوشمار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ اس ملک میں افراط زر کی شرح اپریل میں دس فیصد سے بھی تجاوز کرگئی۔

رپورٹس میں بتایا گیا کہ افراط زر کی وجہ سے کینیڈ اور آسٹریا میں بھی روز مرہ کے اخراجات میں اضافہ ہوگیا ہے ، کنزیومر پرائس انڈیکس کے مطابق دونوں ملکوں میں متوسط طبقے کے اخراجات بلند ترین سطح پر چلے گئے ۔

فنانشل ٹائمز نے روس یوکرین تنازعے کو یورپی ملکوں میں اشیائے صرف کی قیمتوں اور افراط زر کی شرح میں اضافے کی وجہ قرار دیا ہے تاہم روسی حکام کا کہنا ہے کہ ان کے ملک کے خلاف عائد کی جانے والی اقتصادی پابندیوں کے باعث یورپی ممالک کو معاشی افراتفری کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں