The news is by your side.

Advertisement

روسی بحریہ نے آبدوز عملے کو بچانے کا جدید ترین تجربہ کر لیا

ماسکو: روسی بحریہ نے سب مرینرز کی زندگی بچانے کے لیے جدید ترین نئے گیئر کا تجربہ کر لیا۔

تفصیلات کے مطابق روس کی وزارت دفاع کا کہنا ہے کہ روسی بحریہ کے ریسرچ انسٹی ٹیوٹ آف ریسکیو اینڈ انڈر واٹر ٹیکنالوجیز نے اپنے تجرباتی مرکز میں آب دوزوں کے عملے کی زندگی بچانے والے نئے گیئر کا تجربہ کیا ہے۔

اس تجربے کے دوران آب دوز کے تارپیڈو ٹیوبز اور ہنگامی اخراج (اسکیپ ہیچ) کے ذریعے عملے کے بہ حفاظت نکلنے کی مشق کی گئی۔

نئے SSP-M gear کی خصوصیات پہلے والے سے کہیں زیادہ ہیں، جیسا کہ اوپر چڑھنے کی رفتار، تھرمل خواص، کارکردگی جانچنے کا سسٹم، سروس لائف اور عملے کی سیفٹی کی سطح۔

روسی سائنسی مرکز کی جانب سے تیار کردہ اس جدید ترین سسٹم کی وجہ سے سب مرینز کے آپریٹرز کی زندگی کو بچایا جا سکتا ہے۔

اس حوالے سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ جان بچانے والے اس نئے سسٹم کی امتیازی خصوصیت یہ ہے کہ اس گیئر کو پہن کر آب دوز کا عملہ اسکیپ ہیچ کے ذریعے پانی میں 200 میٹر کی گہرائی سے بھی سانس کے آلات کے بغیر بہ حفاظت نکل کر اوپر آ سکتا ہے۔

اس ریسکیو گیئر کی ایک اور خصوصیت یہ ہے کہ اسے اس طرح ڈیزائن کیا گیا ہے کہ یہ باہر کی طرف پھیلا ہوا نہیں، جس کی وجہ سے عملہ آسانی سے ہنگامی اخراج کے چھوٹے سے حصے سے گزر سکتا ہے۔

بیان کے مطابق سب مرینرز یہ ایس جی پی ایم ڈائیونگ سوٹ بغیر کسی اور کی مدد کے کم سے کم وقت میں خود ہی پہن سکتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں