The news is by your side.

Advertisement

‘مری میں قیامت اور وفاقی وزرا کی پریس کانفرنس میں شہباز شریف کو جیل بھیجنے کے دعوے’

لاہور: پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے کہ ایک جانب مری میں قیامت برپا ہے اور دوسری جانب وفاقی وزرا پریس کانفرنس میں شہباز شریف کو جیل بھیجنے کے دعوے کر رہے ہیں۔

قومی اسمبلی کے رکن خواجہ سعد رفیق نے ٹویٹس میں کہا بے حس وفاقی وزرا کی لاہور میں پریس کانفرنس کے دوران ندامت، شرمندگی یا افسوس کی بجائے مسکراتے چہرے دکھائی دیے، اور سانحے کی ذمہ داری قبول کرنے کی بجائے شاہد خاقان عباسی کو ریسکیو کام کرنے کا مشورہ دیا گیا۔

انھوں نے لکھا پریس کانفرنس میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کو پھر جیل بھیجنے اور الیکشن سے پہلے مخالفین کو ٹھکانے لگانے کا دعویٰ کیا گیا، بے شرمی، بے حسی کی انتہا ہے یہ، جب کہ مری میں قیامت برپا ہو چکی ہے۔

سعد رفیق کا کہنا تھا کہ وزیر اعلیٰ اور وفاقی وزرا گھنٹوں تنظیم سازی اجلاس میں مصروف رہے، مسکراتے چہروں سے پریس کانفرنس کرتے، اور اپوزیشن پر طنز کے تیر چلاتے رہے، وزیر اعلیٰ تم کہاں ہو، شہباز شریف ہوتا تو مری میں کھڑا ریسکیو کر رہا ہوتا۔

واضح رہے کہ وفاقی وزیر اطلاعات نے آج پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ اپوزیشن کی طرف سے آج بھی سیاست چمکانے کی کوشش کی گئی، شاہد خاقان عباسی جس حلقے سے منتخب ہوئے، انھیں لوگوں کی مدد کے لیے وہاں جانا چاہیے تھا، لیکن وہ پنڈی میں بیٹھ کر پریس کانفرنس کرتے رہے۔

سیاحت کا مطلب یہ نہیں کہ 48 گھنٹے میں لاکھوں لوگ آ جائیں: فواد چوہدری

فواد چوہدری نے کہا مریم نواز نے بھی بے حس سیاست کی، اپوزیشن کی سیاست اہمیت نہیں رکھتی، یہ کنوئیں کے مینڈک ہیں انھوں نے شور ہی مچانا ہے، احتساب کے حوالے سے نواز شریف اور مریم نواز کو سزا ہو چکی ہے، شہباز شریف اور حمزہ شریف کے کیسز عدالتوں میں ہیں۔

انھوں نے کہا اگلے 6 سے 8 ماہ میں بڑی مچھلیاں تالاب سے باہر ہوں گی، یہ لوگ اگلے الیکشن میں نہیں ہوں گے، لانگ مارچ اصل میں لونگ گواچہ ہے، اپوزیشن کی نہ کوئی سیاست ہے اور نہ ہی کوئی مقصد، فضل الرحمان، شہباز شریف اور بلاول کی آئیڈیالوجی آپس میں نہیں ملتی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں