The news is by your side.

Advertisement

سیف علی خان نے اپنے متنازع انٹرویو پر پاکستانیوں سے معافی مانگ لی

 بالی ووڈ اداکار سیف علی خان نے اپنے متنازع انٹرویو پر پاکستانیوں سے باضابطہ معافی مانگ لی اور وضاحت کی کہ فلم ’فینٹم‘ پر سنسر بورڈکے فیصلے کے بعد ان کاپاکستانی عوام اور اداکاروں کے جذبات سے کھیلنے کا کوئی ارادہ نہیں تھا جومیرے لیے ہمیشہ نیک خواہشات کا اظہار کرتے ہیں۔

 اپنے ایک انٹرویو میں سیف علی خان کاکہناتھاکہ میراایساکوئی ارادہ نہیں تھا، نہ ہی سنسر بورڈ کی توہین کرنا مقصود تھا، میں کئی بار کہہ چکا ہوں کہ ہمارے اپنے معاملات اور ہم پر بھی دباﺅ ہے لیکن ان پر کسی نے توجہ نہیں دی ،میں نے فخر عالم کیساتھ ان کی میزبانی میں پاکستان میں شوز میں شرکت کی اور اچھاوقت گزرا اور ان کا خیرخواہ ہوں ۔

بالی ووڈاداکار نے اپنے اس متنازع بیان پر بھی روشنی ڈالی اور کہاکہ پہلی بات تو یہ ہے کہ مجھے یہ کہنے کا کوئی حق نہیں کہ ملک پر یقین رکھتاہوں یا نہیں اور وہ ریمارکس محظ سنسر بورڈ سے متعلق تھے اور اس فورم میں یہی بحث ہورہی تھی کہ دیکھے جانے سے پہلے ہی فلم پر پابندی لگ سکتی ہے تاہم اسی طرح پاکستان سے تعلقات کے حق میں پچاس اور کمنٹ کیے ۔

اُن کا کہنا تھا کہ فلموں میں اُنہوں نے پاکستانی سپاہیوں اور آئی ایس آئی کے ایجنٹوں کے کردار کیساتھ بھی انصاف کرنے کی بھرپورکوشش کی تاکہ وہ کتنے مضبوط اور پیشہ وارانہ ہوسکتے ہیں، سیف علی خان نے بتایاکہ وہ پاکستانی اداکاروں بالخصوص فخر عالم کیساتھ رابطے میں  ہیں ، وہ پاکستان کے لوگوں اور اداکاروں کی بہت عزت کرتے ہیں ۔

سیف علی خان کا کہنا تھا کہ وہ ان چیزوں میں پھنس کررہ گئے ہیں اور اب وہ بھی چاہتے ہیں کہ ریس کی طرح کی فلمیں بنائیں اور باکس آفس پر نام بنائیں ، میں پاکستان میں موجود اپنی فیملی سے پیار کرتاہوں اور پاکستان میں موجود دیگر کئی چیزیں بھی بہت اچھی لگتی ہیں، میں نہ توزیادہ سیاسی شخصیت اور نہ ہی جج ہوں، میں ایک اداکارہوں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں