The news is by your side.

Advertisement

رکن سندھ اسمبلی سیف الدین خالد کا انوکھا احتجاج، اسمبلی میں لیٹ گئے

کراچی: پی ایس پی رہنما اور رکن سندھ اسمبلی سیف الدین خالد احتجاجاً اسمبلی میں لیٹ گئے، اورنگی ٹاؤن میں پانی کی فراہمی بحال ہونے تک احتجاج جاری رکھنے کا اعلان کردیا۔

سندھ اسمبلی میں گفتگو کرتے ہوئے رکن صوبائی اسمبلی سیف الدین خالد کا کہنا تھا کہ میرے حلقے اورنگی ٹاؤن میں عوام پانی کی بوند بوند کو ترس گئے ہیں، سندھ حکومت اتنی غریب ہے انہیں پانی نہیں دے سکتی، مجھ سے 100 ٹینکرز کے پیسے لے کر انہیں پانی پہنچا دیں۔

اسمبلی کا اجلاس ملتوی ہونے اور ایوان کی لائٹس ، اے سی اور دروازے بند ہونے کے باوجود سیف الدین خالد احتجاجاً لیٹے رہے، ان کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت مجھے ایوان میں اندھیرا کرکے ڈرانا چاہتی ہے، مصطفی کمال نے ہمیں ڈرنا نہیں سکھایا ظالموں کے خلاف کھڑا ہونا سکھایا ہے۔

پی ایس پی اراکین انہیں منانے کی کوشش کرتے رہے مگر وہ بضد رہے کہ جب تک اورنگی ٹاؤن میں پانی نہیں پہنچایا جاتا ان کا احتجاج جاری رہے گا، رکن اسمبلی ناہید بیگم کا کہنا تھا کہ سیف الدین خالد شوگر کے مریض ہیں ان کو کچھ ہوا تو ذمہ دار حکومت ہوگی۔

گزشتہ کئی گھنٹوں سے دھرنا دینے والے رکن سیف الدین کی طبیعت خراب ہوگئی ہے، ڈاکٹرز کی ٹیم سندھ اسمبلی پہنچ گئی مگرانہوں نے علاج کرانے سے انکار کردیا، ان کا کہنا تھا کہ مطالبات کی منظوری تک علاج نہیں کراؤں گا۔

دوسری جانب وزیربلدیات جام خان شورو کا کہنا ہے کہ سیف الدین خالد ڈرامے بازی کررہے ہیں، انہیں اتنے سال سے خیال نہیں آیا الیکشن ایک ماہ رہ گیا ہے تو یہ احتجاج کرنے آگئے ہیں،


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں