سندھ حکومت کی تنخواہوں میں اضافہ، وزیر اعلیٰ کی تنخواہ 35 ہزار سے ڈیڑھ لاکھ ہوگئی -
The news is by your side.

Advertisement

سندھ حکومت کی تنخواہوں میں اضافہ، وزیر اعلیٰ کی تنخواہ 35 ہزار سے ڈیڑھ لاکھ ہوگئی

کراچی: سندھ میں سیاست دانوں، وزیروں اور مشیروں کے وارے نیارے ہوگئے۔ سندھ حکومت کی تنخواہوں اور مراعات میں غیر معمولی اضافہ کردیا گیا جس کے بعد قومی خزانے پر سالانہ 25 سے 30 کروڑ روپے کا اضافی بوجھ پڑے گا۔

تفصیلات کے مطابق سندھ حکومت کے ارکان اسمبلی، وزرا، معاونین اور مشیروں کی تنخواہ و مراعات میں 150 فیصد جبکہ وزیر اعلیٰ اور اسپیکر و ڈپٹی اسپیکر کی تنخواہوں اور مراعات میں 300 فیصد اضافہ کردیا گیا۔

تنخواہوں میں اضافے کے بعد وزیر اعلیٰ سندھ کی تنخواہ 35 ہزار روپے سے بڑھ کر ڈیڑھ لاکھ ہوگئی جبکہ اس کے علاوہ ہاؤس رینٹ اور مینٹی نینس الاؤنس کی مد میں بھی ایک لاکھ 40 ہزار روپے ماہانہ دیے جائیں گے۔

اسی طرح اسپیکر سندھ اسمبلی کی ماہانہ تنخواہ بھی 80 ہزار سے بڑھ کر ڈیڑھ لاکھ روپے ہوگئی۔ اسپیکر کو ہاؤس رینٹ اور مینٹی نینس الاؤنس کی مد میں ماہانہ ایک لاکھ 40 ہزار روپے ملیں گے۔

ڈپٹی اسپیکر کی تنخواہ ماہانہ 70 ہزار روپے سے بڑھ کر ایک لاکھ 40 ہزار روپے ہوگئی۔ ڈپٹی اسپیکر کو ماہانہ 55 ہزار روپے ہاؤس رینٹ اور دیگر مراعات ملیں گی۔

وزرا اور مشیروں کی تنخواہ ماہانہ 30 ہزار سے بڑھا کر 75 ہزار ہوگئی۔ وزرا اور مشیروں کو ماہانہ ہاؤس رینٹ کی مد میں 55 ہزار روپے ملیں گے جبکہ 50 ہزار روپے ہاؤس مینٹی نینس الاؤنس، 500 لیٹر پیٹرول اضافی ملے گا۔

اراکین اسمبلی کی ماہانہ تنخواہ 24 ہزار سے بڑھا کر 50 ہزار روپے کی گئی ہے۔ اراکین اسمبلی کو ہاؤس رینٹ سمیت دیگر الاؤنسز کی مد میں ماہانہ ایک لاکھ ملیں گے۔ پارلیمانی سیکریٹریز کی ماہانہ تنخواہ 10 ہزار سے بڑھ کر 60 ہزار روپے ہوگئی۔

پارلیمانی سیکریٹریز کو 45 ہزار ہاؤس رینٹ اور 30 ہزار مینٹی نینس الاؤنس ملے گا جبکہ 20 ہزار روپے یوٹیلٹی الاؤنس اور 4 سو لیٹر پیٹرول ماہانہ بھی ملے گا۔

مشیروں کی ماہانہ تنخواہ 20 ہزار سے بڑھا کر 70 ہزار روپے کر دی گئی۔ مشیروں کو 45 ہزار ہاؤس رینٹ، 30 ہزار روپے مینٹی نینس الاؤنس، 20 ہزار روپے یوٹیلٹی الاؤنس اور دیگر مراعات بھی شامل ہیں۔

وزیر اعلیٰ، وزرا اور اراکین کی حادثاتی موت پر لواحقین کو 50 لاکھ روپے ملیں گے۔

سندھ حکومت کی تنخواہوں میں اس ہوش ربا اضافے سے سرکاری خزانے پر سالانہ 25 سے 30 کروڑ کا اضافی بوجھ پڑے گا۔ وزیر اعلیٰ سندھ نے تنخواہوں اور مراعات کی سمری پر دستخط کردیے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں