site
stats
انٹرٹینمںٹ

سلمان خان کا اسسٹنٹ ڈائریکٹرسےبالی ووڈ کےسلطان بننےکا سفر

Salman Khan

ممبئی: بالی ووڈ کے سلطان کروڑوں دلوں کی جان سپراسٹار سلمان خان آج اپنی 52 ویں سالگرہ منا رہے ہیں۔

سلمان خان نے اسسٹنٹ ڈائریکٹر سے لےکربالی ووڈ کےسلطان بننے کے سفر میں کئی کامیابیوں اور ناکامیوں کا سامنا کیا لیکن ہمت نہیں ہاری اور فلم ’ تیرے نام کے بعد تو وہ شہرت کی بلندیوں پر پہنچ گئےاور پھر انہوں نے پیچھے مڑکرنہیں دیکھا۔

بالی ووڈ کے دبنگ خان نے بھارتی ریاست مدھیہ پردیش کے شہراندور میں 27 دسمبر 1965 کو ناموررائٹر سلیم خان کے گھرآنکھ کھولی اور نام عبدالرشید سلیم سلمان خان رکھا گیا لیکن فلمی دنیا میں وہ سلمان خان کے نام سے مشہور ہوئے۔

سلمان خان کے دو بھائی ارباز خان اور سہیل خان ہیں اور ان کی دو بہنیں الویرہ خان اور لے پالک ارپیتاخان ہیں۔

سپراسٹار سلمان خان اپنے کیریئرکی شروعات سےبطوررائٹر، ڈائریکٹرکام کرنا چاہتےتھےاورانہوں نے 1988 میں فلم
فلک میں اسسٹنٹ ڈائریکٹرکے طور پر کام بھی کیا تھا تاہم وہ فلم باکس آفس پرنہیں چل سکی۔

انہوں نے ڈائریکشن کے شعبے میں ناکامی کےبعد اداکاری کےمیدان میں اپنی قسمت آزمانے کا فیصلہ کیا اور 1988میں بننے والی فلم بیوی ہو توایسی سےاپنےفلمی کیریئرکا آغاز کیا، لیکن پہلی کامیابی انہیں فلم میں نے پیار کیا سےملی۔

سلمان خان نے فلم ساجن ، ہم آپ کے ہیں کون ، ہم دل دے چکے صنم میں رومانوی کردار نبھا کرعوام کو اپنا گرویدہ بنایا۔

دبنگ خان نے اپنے فلمی کیریئر میں کئی عروج وزوال دیکھے اور ایک وقت ایسا بھی آیا کہ جب کہا جانے لگا کہ اب شاید وہ دوبارہ بڑے پردے پراداکاری کے جوہر نہ دکھا سکیں، لیکن 2003 میں ریلیز ہونے والی فلم تیرے نام میں انہوں نے اپنی اداکاری ثابت کردیا کہ فلمی دنیا میں ان کا سفرختم نہیں ہوا یہ تو شروعات ہے۔

بالی ووڈ کےسلطان کی فلم پارٹنر ، وانٹڈ ‘ ، ریڈی ، باڈی گارڈ ،  دبنگ‘ ،  کک ، پریم رتن دھن پایو،  بجرنگی بھائی    جان  ،  ایک تھا ٹائیگر‘  دبنگ ٹو نے دنیا بھر میں کامیابی کے جھنڈے گاڑے۔

بھارتی فلم انڈسٹری میں غیرملکی اداکاراؤں کو متعارف کرانے کا سہرا بھی سلمان خان کو جاتا ہے ان میں سے باربی ڈول کتریہ کیف، جیکولین فرنینڈس کا شمار بالی ووڈ کی صف اول کی اداکاراؤں میں ہوتا ہے۔

عدالت میں کئی سالوں سے جاری قانونی جنگ کے بعد ممبئی کی سیشن کورٹ کے جج ڈی ڈبلیو دیش پانڈے نے سلمان کو ہٹ اینڈ رن کیس 2002 میں مجرم قرار دے کر 5 سال قید کی سزا سنائی تھی جسے بعد میں ممبئی ہائی کورٹ نے کالعدم قرار دیا تھا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top