سرکاری خزانے میں فراڈ پر اسرائیلی وزیر اعظم کی اہلیہ پر فرد جرم عائد
The news is by your side.

Advertisement

سرکاری خزانے میں فراڈ پر اسرائیلی وزیر اعظم کی اہلیہ پر فرد جرم عائد

تل ابیب: سرکاری خزانے میں خورد برد پر اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو کی اہلیہ سارہ پر فرد جرم عائد کردی گئی۔

تفصیلات کے مطابق اسرائیلی وزیر اعظم کی اہلیہ سارہ پر سرکاری خزانے میں فراڈ کرنے اور اس کا غلط استعمال کرتے ہوئے دعوتیں اڑانے پر فرد جرم عائد کی گئی ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ اسرائیلی وزارت انصاف کے مطابق وزیراعظم کی اہلیہ نے ہوٹل سے کھانا خریدنے کے لیے بھی سرکاری مال سے چھیانوے ہزار ڈالر خرچ کیے ہیں، علاوہ ازیں انہوں نے ذاتی طور پر بھی پیسوں کا استعمال کیا ہے۔


بدعنوانی کیس: اسرائیلی پولیس کی نیتن یاہو، بیوی اور بیٹے سے تفتیش


سارہ نیتن یاہو کے خلاف سرکاری خزانے میں خورد برد کیس کی سماعت آج اسرائیلی عدالت میں ہوئی اور جج نے سرکاری خزانے میں خورد برد ثابت ہونے کے بعد ان پر فرد جرم عائد کی۔

دوسری جانب سارہ کے وکیل نے کہا ہے کہ عدالت کی جانب سے فرد جرم عائد کرنا مضحکہ خیز اور پاگل پن ہے، ایسے فیصلوں کو کسی صورت قبول نہیں کریں گے۔


سرکاری خزانے میں خوردبرد: اسرائیلی وزیراعظم کی بیوی کےخلاف تحقیقات


خیال رہے کہ اس سے قبل جب 1977 میں اسرائیلی وزیراعظم اسحٰق رابن کی اہلیہ پر جرم ثابت ہوا تھا تو انہوں نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔

واضح رہے کہ کرپشن اور غیر قانونی طور پر مہنگے تحائف وصول کرنے کے الزام میں اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو اور ان کے بیٹے یائر نیتن یاہو کے خلاف بھی پولیس تفتیش کر چکی ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں