The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب : چٹانوں کو تراش کر دنیا کا انوکھا ہوٹل بنانے کی تیاری

ریاض : سعودی عرب میں فن تعمیر کے ایک عظیم منصوبے پر کام جاری ہے جس کے تحت چٹانوں کو تراش کر خوبصورت ہوٹل تعمیر کیا جائے گا، اس دیدہ زیب شاہکار کیلئے دنیا کے ماہر ترین آرکیٹک کو ذمہ داری سونپ دی گئی ہے۔

اس حوالے سے عالمی آرکیٹک جان نوفیل نے کہا ہے کہ سعودی عرب کے العلاء صحرا میں چٹانوں کے درمیان شاندار ہوٹل تعمیر کرنے کا کام انہیں سونپ دیا گیا ہے۔

سعودی ذرائع ابلاغ کے مطابق انہوں نے منصوبے کی وضاحت کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ العلا کے صحرا میں سیاحوں کو متوجہ کرنے والا عظیم منصوبہ ہوگا، ہوٹل کی تعمیر چٹانوں اور پہاڑوں کو کاٹ کر کی جا رہی ہے اس کی دیواریں چٹانوں کی ہوں گی۔

انہوں نے کہا کہ یہ ہوٹل مدینہ منورہ سے 220 کلو میٹر دور العلا میں ہوگا، اس کا افتتاح 2024 میں کیا جائے گا،40کمرے اور تین ویلاز پر مشتمل ہوٹل العلا کی شاندار تہذیب اور تاریخ کی عکاسی کرے گا۔

عالمی آرکیٹک جان نوفیل نے بتایا کہ تمام کمرے چٹانوں کو کاٹ کر بنائے جائیں گے، اس کے علاوہ ہوٹل کی تعمیر اس زاویے سے کی جائے گی کہ تمام کمروں کی کھڑکیوں سے العلا کے خوبصورت پہاڑ اور صحرا نظر آئیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہوٹل کے در و دیواروں کو علاقہ سے ہم آہنگ کرنے کے لیے ان پر رنگ نہیں کیا جائے گا بلکہ چٹان کی اصل رنگت کو رہنے دیا جائے گا، ہوٹل کی مرکزی لابی پہاڑ میں شگاف ڈال کر تعمیر کی جائے گی، یہ دنیا کی منفرد اور خوبصورت جگہ ہوگی۔

واضح رہے کہ ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی سربراہی میں العلا رائل کمیشن نے العلا کی تعمیر و ترقی اور اسے سیاحتی علاقہ بنانے کے لیے کام کا آغاز کر دیا ہے، اس ضمن میں معروف آکیٹک جان نوفیل کو یہاں شاندار ہوٹل تعمیر کرنے کی ذمہ داری تفویض کی گئی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں