The news is by your side.

Advertisement

ہیروئن اسمگلنگ کا جرم: سعودی عرب میں پاکستانی میاں بیوی کے سر قلم

گزشتہ پانچ برسوں میں پہلی پاکستانی خاتون کو سزا

ریاض : ہیروئن اسمگلنگ کے جرم میں سعودی عرب میں پاکستانی میاں بیوی کا سر قلم کردیا گیا،سعودی وزارت داخلہ نے کہا محمد مصطفیٰ اور ان کی اہلیہ فاطمی اعجاز کو ہیروئن اسمگلنگ کے دوران حراست میں لیا گیا تھا۔

تفصیلات کے مطابق سعودی عرب میں منشیات کی اسمگلنگ کے جرم میں پاکستانی میاں بیوی کے سر قلم کر دیئے گئے، ریاض کے وزرات خارجہ کی جانب سے جاری اعلامیے میں کہاگیاکہ سعودی عرب کی عدالت میں ہیروئن اسمگلنگ کے مجرم دونوں میاں بیوی کو سزائے موت کی سزا ہوئی تھی۔

جاری کردہ پریس ریلیز میں بتایا گیا کہ محمد مصطفیٰ اور ان کی اہلیہ فاطمی اعجاز کو ہیروئن اسمگلنگ کے دوران حراست میں لیا گیا تھا، مذکورہ گرفتاری عدالت میں ظاہر کی گئی جہاں تحقیقات کے نتیجے میں دونوں کو مجرم قرار دیا گیا۔

سعودی وزارت نے اس حوالے سے بتایا گیا کہ سزائے موت کو سپریم کورٹ میں بھی چیلنج کیا گیا تاہم عدالت عظمیٰ نے سزا برقرار رکھی، بعدازاں رائل آرڈ کے بعد دونوں میاں بیوی کو جدہ میں سزائے موت دے دی گئی۔

گزشتہ پانچ برسوں میں پہلی پاکستانی خاتون کو سزا

جسٹس پروجیکٹ پاکستان (جے پی پی) نے سعودی عدالت کے فیصلے پر احتجاج کیا اور کہا کہ گزشتہ پانچ برسوں میں پہلی خاتون پاکستانی کو سزا دی گئی، جے پی پی کے مطابق اس حقیقت کے برعکس کہ دونوں ممالک قیدیوں کے تبادلے پر مذاکرات کررہے ہیں، میاں بیوی کے سر قلم کردیئے گئے۔

ان کے مطابق اوورسزایمپلائمنٹ والے معمولی اجرت پر روز گار کمانے والوں کو جھانسہ دے کر اسمگلنگ کرواتے ہیں۔

جے پی پی نے الزام عائد کیا کہ وفاقی حکومت اپنے مقدمات میں اپنے شہریوں کو تنہا چھوڑ دیتے ہیں جبکہ وزیراعظم نے بھیجے پی پی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر نے حکومت پر زوردیا کہ تمام سفارتی تعلقات کو استعمال میں لاتے ہوئے سعودی حکومت کو پاکستانیوں کی سزائے موت روکنے پر آمادہ کرے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں